Articles مضامین

پردہ تو ہٹا اپنی آنکھوں سے!

مجاہد عظیم آبادی


مدیر ہفتہ واری مجلہ روح حیات
مجرمانہ سرگرمیوں کی ایک طویل تاریخ کے ساتھ ہندوستانی سیاست کی ایک متنازعہ شخصیت مختار انصاری کے حالیہ انتقال نے ایک بار پھر بحث و مباحثہ کو ہوا دی ہے اور ملک بھر میں جذبات کو بھڑکا دیا ہے۔ اگرچہ کچھ لوگ یہ قیاس آرائیاں لگا رہے ہیں کہ ان کی موت کے پیچھے زہر اور حکومت ہند کی چال سازی ہے لیکن ٹھوس شواہد کی عدم موجودگی حقائق کے بجائے قیاس کی بنیاد پر کسی نتیجے پر پہنچنے کے خطرے کی نشاندہی کرتی ہے۔
مختار انصاری جیسے لوگوں کے لیے ہمدردی کا اظہار کرنا واقعی مایوس کن ہے، جی ہاں، یہ میرے الفاظ ہیں، دیکھیں جن کا مجرمانہ ماضی اچھی طرح سے دستاویزی ہے اور جن کے اعمال نے بے شمار افراد اور خاندانوں کو بے پناہ نقصان پہنچایا ہے۔ ایسے فرد کے خلاف الزامات کی سنگینی کے باوجود، معاشرے کا ایک ایسا طبقہ موجود ہے جو اس کے جرائم پر آنکھیں بند کرنے کا انتخاب کرتا ہے، کچھ لوگ یہ خیال کر رہے ہوں گے کہ بھلا یہ کیا بات ہوئی، مختار انصاری اور کرمنل؟ کیسے؟
بہت سے احباب کی درخواست موصول ہوئی کہ مختار انصاری کے اوپر سوانح لکھیں، ان کی اچھائیوں کو لوگوں تک پہنچائیں، ایک مسیحے کے طور پر ان کو پیش کریں، دیکھیں بھئی، یہ تو ہم سے نہیں ہو پائیگا، میں نے ہمیشہ سے اندھ بھکتی کے خلاف بلاتفریق مذہب و ملت قلم اٹھائی ہے، مختار انصاری کے صرف مسلمان ہونے کی وجہ سے ان کے کرمنل رکارڈ کو طاق پر نہیں رکھا جا سکتا، جس طرح آپ یہ باور کرتے ہیں کہ مختار انصاری نے سب کچھ صحیح ہی کیا اسی طرح غیر قومیں بھی اپنے رہنماؤں کے بارے میں تصور کرتی ہیں، چاہے وہ مسلمانوں کے ساتھ موب لنچنگ کا معاملہ ہو یا گجرات میں ہوئے دنگوں کا، اندھ بھکتی یہی تو ہے…. افسوس کہ بہت سے لوگ مختار انصاری کو شہید کے طور پر خراج تحسین پیش کر رہے ہیں۔
یہ اندھی ہمدردی نہ صرف گمراہ کن ہے بلکہ خطرناک بھی ہے، کیونکہ یہ استثنیٰ کے کلچر کو برقرار رکھتی ہے اور قانون کی حکمرانی کو کمزور کرتی ہے۔ یہ ایک پریشان کن پیغام بھیجتا ہے کہ مجرمانہ رویے کو مذہب، ذات، یا سیاسی وابستگی جیسے عوامل کی بنیاد پر معاف یا جواز بنایا جا سکتا ہے۔ اس طرح کے جذبات نہ صرف متاثرین کی یاد کو مجروح کرتے ہیں بلکہ جرائم اور تشدد کو معمول بنا کر معاشرے کے تانے بانے کو بھی خراب کرتے ہیں۔
یہ تسلیم کرنا بہت ضروری ہے کہ ہمدردی جرم کے بے گناہ متاثرین اور ان کے خاندانوں کے لیے مخصوص کی جانی چاہیے، جنہوں نے مختار انصاری جیسے افراد کے ہاتھوں ناقابل تصور درد اور تکلیفیں برداشت کی ہیں چاہے وہ مسلم رہے ہوں یا غیر مسلم اس سے فرق نہیں پڑتا۔ مجرموں کو رومانٹک بنا کر اور ان کے مظالم پر پردہ ڈالنے سے، ہم ان کے اعمال کی کشش ثقل کو معمولی سمجھنے اور تشدد اور لاقانونیت کے ایک چکر کو جاری رکھنے کا خطرہ مول لیتے ہیں۔
مزید برآں، مختار انصاری جیسے افراد کو مذہب یا شناخت کی تنگ نظروں سے دیکھنے کا رجحان گہرا مسئلہ ہے اور فرقہ وارانہ خطوط پر معاشرے کو مزید پولرائز کرنے کا کام کرتا ہے۔ یہ حقیقت کہ آبادی کے بعض طبقات، خاص طور پر مسلمان، انصاری کے لیے صرف ان کی مذہبی شناخت کی بنیاد پر ہمدردی کا اظہار کر رہے ہیں، تشویش کا باعث ہے اور انصاف اور جوابدہی کے لیے ایک زیادہ اہم اور اصولی نقطہ نظر کی ضرورت پر زور دیتا ہے۔
مختار انصاری کی موت معاشرے کے لیے ایک جاگنے کی کال کے طور پر کام کرے کہ وہ جرائم اور مجرموں کے تئیں اپنے رویوں کا از سر نو جائزہ لے۔ جان بوجھ کر قانون کی خلاف ورزی کرنے والے افراد کے لیے ہمدردی کو برداشت یا معاف نہیں کیا جانا چاہیے۔ اس کے بجائے، آئیے ہم متاثرین کے لیے اپنی ہمدردی کا اظہار کریں اور ایک ایسے معاشرے کی تعمیر کے لیے کام کریں جہاں انصاف، دیانتداری اور ہمدردی کا راج ہو۔

Related posts

राजनीतिक विरोध में ऐसी भाषा अंदर से हिला देती है

Paigam Madre Watan

The Owaisi brothers epitomize a saga of petty theatrics and sentimental theatrics.

Paigam Madre Watan

ایک ایسا عظیم شخص جس نے 1994ء میں کنگ فیصل ایوارڈ کو یہ کہتے ہوئے ٹھکرایا کہ میں نے جو کچھ لکھا ہے اللہ تعالی کی خوشنودی کے لئے لکھا ہے لہذا مجھ پر میرے دین کو خراب نہ کریں

Paigam Madre Watan

Leave a Comment

türkiye nin en iyi reklam ajansları türkiye nin en iyi ajansları istanbul un en iyi reklam ajansları türkiye nin en ünlü reklam ajansları türkiyenin en büyük reklam ajansları istanbul daki reklam ajansları türkiye nin en büyük reklam ajansları türkiye reklam ajansları en büyük ajanslar