Delhi دہلی

کیجریوال نے ڈاکٹر امبیڈکر کے مہاپری نروان دیوس پر کہا، "ہم بابا صاحب کے شاگرد ہیں، صرف AAP ہی ملک کو تعلیم کی ضمانت دے سکتی ہے۔”

بابا صاحب نے تعلیم کو انتہائی اہمیت دی، ان کی پیروی کرتے ہوئے عآپ حکومت نے تعلیم پر بہت کام کیا


ہمارے پاس عوام کے آشیرواد کے سوا کچھ نہیں ہے، ہمیں اپنی جدوجہد جاری رکھنی ہے، ہمیں نہ تو ہمت ہارنی ہے اور نہ ہی ڈرنا ہے

نئی دہلی،(پی ایم ڈبلیو نیوز) عام آدمی پارٹی کے قومی کنوینر اور دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال نے بدھ کو پارٹی ہیڈکوارٹر میں مہاپری نروان دیوس پر بابا صاحب ڈاکٹر کو خراج عقیدت پیش کیا۔ ڈاکٹر بھیم راؤ امبیڈکر کو پھول چڑھا کر خراج عقیدت پیش کی۔ اس دوران انہوں نے بابا صاحب کی زندگی سے متعلق متاثر کن واقعات کو شیئر کیا۔وزیراعلیٰ نے کہا کہ ہم بابا صاحب کے شاگرد ہیں۔ صرف عام آدمی پارٹی ہی ملک کو تعلیم کی ضمانت دے سکتی ہے۔ بابا صاحب نے تعلیم کو سب سے زیادہ اہمیت دی۔ ہم نے ان کے راستے پر چلتے ہوئے ہم نے تعلیم پر بہت کام کیا ہے۔ آج ملک کی دونوں بڑی پارٹیاں عام آدمی پارٹی کی نقل کر رہی ہیں اور عوام کو طرح طرح کی ضمانتیں دے رہی ہیں، لیکن آج بھی کوئی تعلیم کی بات نہیں کر رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے کام نے ان لوگوں کی راتوں کی نیندیں اڑا دی ہیں۔ وہ جانتے ہیں کہ دہلی میں عام آدمی پارٹی کو شکست نہیں دے سکتے۔ اس لیے وہ ہم سے دہلی کی طاقت چھیننے کی کوشش کر رہے ہیں۔ ان لوگوں نے فیصلہ کیا ہے کہ ہمیں کام نہیں کرنے دیں گے اور ہم نے بھی فیصلہ کیا ہے کہ ہم کام کرتے رہیں گے۔ عام آدمی پارٹی بابا صاحب ڈاکٹر۔بھیم راؤ امبیڈکر کے مہا پری نیروان دیوس کے موقع پر بدھ کو پارٹی ہیڈکوارٹر میں انہیں خراج عقیدت پیش کرنے کے لیے ایک پروگرام کا انعقاد کیا گیا۔ پروگرام کے مہمان خصوصی پارٹی کے قومی کنوینر اور دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال تھے۔اس دوران جئے بھیم اور بھارت ماتا کے نعرے بھی خوب گونجے۔ اس موقع پر بابا صاحب کی زندگی کی جدوجہد پر مبنی بھجن پروگرام بھی منعقد کیا گیا۔ پروگرام کی صدارت دہلی کے ایس سی؍ایس ٹی ونگ کے صدر اور ایم ایل اے وشیش روی نے کی۔ اس موقع پر سماجی بہبود کے وزیر راج کمار آنند، پارٹی کے قومی جنرل سکریٹری (تنظیم) اور راجیہ سبھا کے رکن ڈاکٹر۔سندیپ پاٹھک، وزیر، ایم ایل اے کلدیپ کمار، پارٹی کے دیگر سینئر لیڈر اور بڑی تعداد میں کارکنان موجود تھے۔اس موقع پر وزیراعلیٰ اروند کیجریوال نے کہا کہ ہم نہ صرف ہندوستان بلکہ پوری دنیا میں ایک عظیم انسان بابا صاحب ڈاکٹر کو خراج عقیدت پیش کر رہے ہیں۔بھیم راؤ امبیڈکر کے مہا پری نیروان دیوس کے موقع پر جمع ہوئے ہیں۔ ہم بابا صاحب کو دل کی گہرائیوں سے خراج عقیدت پیش کرتے ہیں اور دعا گو ہیں کہ بابا صاحب ہر قدم پر ہماری رہنمائی کریں۔ وزیراعلیٰ نے کہا کہ میری خواہش ہے کہ ہر کوئی بابا صاحب کی زندگی سے متعلق کہانیوں کو اپنے گھر، خاندان اور معاشرے میں شیئر کرے۔بتائیں تاکہ زیادہ سے زیادہ لوگ بابا صاحب کی زندگی سے متاثر ہو سکیں۔بابا صاحب کی زندگی سے متعلق کہانیاں سناتے ہوئے وزیراعلیٰ اروند کیجریوال نے کہا کہ ہم سب جانتے ہیں کہ بابا صاحب ایک دلت گھرانے میں پیدا ہوئے تھے اور ان کے والدین بہت غریب تھے۔ اس کے گھر میں کھانا بھی تھا۔ اُن دنوں اچھوت پن اس قدر پھیل چکا تھا کہ جب وہ اسکول جاتے تھے تو اپنا بوریا بستر ساتھ لے جاتے تھے۔ بابا صاحب کو کلاس میں داخل نہیں ہونے دیا گیا، انہیں کلاس سے باہر بٹھا دیا گیا۔ ہم تصور کر سکتے ہیں کہ استاد کلاس روم میں بچوں کو پڑھا رہا تھا اور بابا صاحب باہر بیٹھے ان کی باتیں سنتے تھے۔ بابا صاحب کو اس گھڑے سے پانی پینے کی بھی اجازت نہیں تھی جو دوسرے بچوں کے لیے تھا۔

اس طرح وہ پرائمری، اسکول اور کالج کی تعلیم مکمل کی۔ کالج کی تعلیم مکمل کرنے کے بعد، بابا صاحب 1913 میں پڑھنے کے لیے کولمبیا، امریکہ چلے گئے۔ آج بھی کولمبیا یونیورسٹی دنیا کی بہترین یونیورسٹی سمجھی جاتی ہے اور وہاں داخلہ لینا تقریباً ناممکن ہے۔ آج بھی اگر کسی بچے کو کولمبیا یونیورسٹی میں داخلہ مل جاتا ہے۔اگر آپ اسے لینا چاہتے ہیں تو بھی یہ آسان نہیں ہے۔ اس سے اندازہ لگایا جاسکتا ہے کہ بابا صاحب کتنے باصلاحیت تھے کہ انہیں 1913 میں کولمبیا یونیورسٹی میں داخلہ ملا۔وزیراعلیٰ اروند کیجریوال نے کہا کہ آج اگر آپ کو امریکہ، فرانس، جاپان یا اٹلی کی کسی بھی یونیورسٹی میں داخلہ لینا ہے تو آپ گوگل پر سرچ کریں، فارم ڈاؤن لوڈ کریں اور آن لائن اپلائی کریں۔ لیکن ان دنوں گوگل اور انٹرنیٹ نہیں تھا۔ حیرت کی بات ہے کہ ایک گاؤں میں بہت غریب لوگ خاندان کے رہنے والے بابا صاحب کو کس نے بتایا ہو گا کہ امریکہ جیسا ملک ہے اور وہاں کولمبیا یونیورسٹی ہے، ان کا فارم کہاں سے ملنا ہے اور کیسے اپلائی کرنا ہے۔ بابا صاحب نے کولمبیا یونیورسٹی سے پی ایچ ڈی کی۔ بابا صاحب نے پڑھائی کو اتنی اہمیت دی کہ وہ پی ایچ ڈی سے مطمئن نہیں تھے۔ پھر وہ لندن چلے گئے۔ اسکول آف اکنامکس میں دوسری پی ایچ ڈی کے لیے درخواست دی۔ یہاں بھی داخلہ ملنا تقریباً ناممکن تھا۔ لندن میں پڑھتے ہوئے جب پیسے ختم ہوگئے تو بابا صاحب ہندوستان واپس آگئے۔ ہندوستان میں کچھ پیسے کمائے اور پھر پی ایچ ڈی کرنے کے لیے واپس لندن چلے گئے اور ڈاکٹریٹ کی ڈگری حاصل کی۔وزیراعلیٰ اروند کیجریوال نے کہا کہ یہ ہمارے ملک کی بدقسمتی ہے کہ بابا صاحب وقت سے پہلے ہمیں چھوڑ کر چلے گئے۔ اگر بابا صاحب مزید 10-15 سال زندہ رہتے تو اپنی زندگی میں ملک کے تمام سرکاری اسکولوں کو ٹھیک کر دیتے۔ آج ملک کو آزاد ہوئے 75 سال ہوچکے ہیں، ان 75 سالوں میں ان سیاسی جماعتوں نے مل کر حکومت بنائی ہے۔اسکول تباہ ہو گئے۔ تعلیم ان جماعتوں کے ایجنڈے میں شامل نہیں۔ عام آدمی پارٹی کو چھوڑ کر کوئی اور پارٹی نہیں چاہتی کہ ملک کے غریب خاندانوں کے بچے اچھی تعلیم حاصل کریں۔ ہمارے ملک نے بہت سے عظیم جنگجو پیدا کیے ہیں لیکن بابا صاحب ہی وہ واحد شخصیت ہیں جنہوں نے تعلیم کو سب سے زیادہ اہمیت دی۔ بابا صاحب کے علاوہ کسی نے تعلیم کی بات نہیں کی۔ بابا صاحب غربت سے نکلے تھے اور بہت جدوجہد کے بعد اتنی اچھی تعلیم حاصل کی تھی۔آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ دوسری پارٹیوں نے عام آدمی پارٹی کا پورا ایجنڈا چرا لیا ہے۔ میں پہلا شخص تھا جس نے عوام کے درمیان جا کر کیجریوال کی ضمانت مانگی۔ اب تمام سیاسی جماعتیں ضمانتیں دے رہی ہیں اور وہ اب منشور کو بھول چکی ہیں۔ تمام جماعتیں اب مفت بجلی کی بات کر رہی ہیں۔لیکن آج بھی کوئی تعلیم کی بات نہیں کر رہا ہے۔ صرف عام آدمی پارٹی ہی تعلیم کی ضمانت دے سکتی ہے، کیونکہ ہم بابا صاحب امبیڈکر کے شاگرد ہیں۔ آپ ملک کی دونوں بڑی جماعتوں کے ریزولیوشن پیپرز دیکھ سکتے ہیں۔ یہ دونوں جماعتیں دوسری چیزیں مفت فراہم کرنے کی بات کرتی ہیں لیکن بچوں کے لیے سرکاری اسکول۔اسے ٹھیک کرنے کے بارے میں کبھی کچھ نہ کہیں۔ عام آدمی پارٹی کو چھوڑ کر کوئی اور پارٹی تعلیم کی بات نہیں کرتی ہے۔ عام آدمی پارٹی نے تعلیم پر بہت کام کیا ہے۔وزیراعلیٰ اروند کیجریوال نے کہا کہ ہم سب بہت عام لوگ ہیں۔ ہمارے 90 فیصد سے زیادہ ایم ایل ایز کسی لیڈر کے بچے نہیں ہیں، یہ لوگ کسی سیاسی پارٹی سے نہیں آئے ہیں۔ یہ تمام لوگ عام آدمی ہیں اور عام آدمی کے مسائل کو سمجھتے ہیں۔ میرے تمام رشتہ داروں میں سے کوئی بھی سیاست میں نہیں ہے۔ اس لیے ہم سب ہم تعلیم کی اہمیت کو سمجھتے ہیں کہ اگر کسی خاندان کا بچہ اچھی تعلیم حاصل کرے تو اس خاندان کی غربت سمیت بہت سے مسائل دور ہو جاتے ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ اگر کسی خاندان کا بچہ اچھی تعلیم حاصل نہ کرے تو اس کی آنے والی نسلیں بھی پسماندہ رہ جاتی ہیں۔ اس لیے تعلیم ہر ایک کے لیے بہت ضروری ہے۔ اس لیے ہم نے تعلیم پر توجہ دی۔سب سے زیادہ دباؤ۔ مجھے لگتا ہے کہ اس ملک کے عوام کو گزشتہ 75 سالوں سے جان بوجھ کر ان پڑھ رکھا گیا ہے۔ اگر عام آدمی پارٹی کی دہلی حکومت 5-7 سالوں میں دہلی کے 2 کروڑ لوگوں کے بچوں کو اچھی تعلیم دے سکتی ہے تو 75 سالوں میں ملک کے 140 کروڑ لوگوں کو بھی اچھی تعلیم دی جا سکتی ہے، لیکن جان بوجھ کر۔لوگوں کو ناخواندہ رکھا گیا۔وزیراعلیٰ اروند کیجریوال نے کہا کہ جدوجہد اور خدمت بابا صاحب کے دو اہم منتر تھے۔ ان کے دونوں منتر عام آدمی پارٹی پر لاگو ہوتے ہیں۔ جب ہم نے دہلی میں 70 میں سے 67 سیٹیں جیتیں تو ہمیں لگا کہ ہماری جدوجہد ختم ہو گئی ہے اور اب ہم عوام کی خدمت کریں گے۔ لیکن جس طرح ان لوگوں نے ہمیں ہراساں کیا، اس سے کوئی فائدہ نہیں ہوا۔ اتنی رکاوٹیں کھڑی کیں اور ایک کے بعد دوسرا قانون لا کر ہماری ساری طاقت چھین لی۔ ہم نے اقتدار کے بغیر بھی اتنا کام کیا۔ ان رکاوٹوں کو دیکھ کر مجھے لگنے لگا کہ عام آدمی پارٹی جدوجہد کے لیے پیدا ہوئی ہے۔ عام آدمی پارٹی میں شامل ہونے والوں کو پہلے سوچنا چاہیے کہ یہ کانٹوں کا تاج ہے۔ ہماری پوری زندگی یہ ایک جدوجہد ہے اور ہمیں جدوجہد میں ہی جینا ہے۔ جس طرح بابا صاحب کی ساری زندگی جدوجہد تھی، اسی طرح ہمیں بھی جدوجہد میں گزارنا ہے۔ آج یہ لوگ مسلسل ہمارا کام روک رہے ہیں۔ ان لوگوں نے فیصلہ کیا ہے کہ ہمیں کام نہیں کرنے دیں گے اور ہم نے بھی فیصلہ کیا ہے کہ ہم کام کرتے رہیں گے۔ یہاں تک کہ جب ہم سڑک پر تھے،لوگوں سے کام لیا جاتا تھا۔ اب وہ حکومت کے اندر آگئے ہیں تو کوئی نہ کوئی راستہ ضرور نکلے گا۔آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ ہمیں جدوجہد سے نہیں ڈرنا چاہئے۔ آج عام آدمی پارٹی کے تین چار لیڈر جیل میں ہیں۔ آج اگر وہ لوگ جھک کر ان کی بات سنیں اور بی جے پی میں شامل ہو جائیں تو وہ دو دن کے اندر جیل سے باہر ہو جائیں گے۔ منیش سسودیا کی بیوی بہت بیمار ہے، ان کا بیٹاوہ کینیڈا میں ہے اور گھر پر اس کی دیکھ بھال کرنے والا کوئی نہیں ہے۔ منیش سسودیا کو جیل میں ہوئے تقریباً 10 ماہ ہوچکے ہیں۔ آج بھی اگر منیش سسودیا بی جے پی سے ہاتھ ملاتے ہیں تو وہ اچھی زندگی گزار سکتے ہیں۔ منیش سسودیا بابا صاحب اور بھگت سنگھ کے شاگرد ہیں، مر جائیں گے لیکن جھکیں گے نہیں۔ ہم ملک کے لیے لڑتے آئے ہیں، ملک کی بحالی پر کوئی سمجھوتہ نہیں کریں گے۔ بابا صاحب کی سوانح عمری پڑھنے سے پتہ چلتا ہے کہ ایسے کئی مواقع آئے جب ان پر سمجھوتہ کرنے کا دباؤ تھا، لیکن انہوں نے اپنے حقوق کے ساتھ کبھی سمجھوتہ نہیں کیا۔ اسی طرح ہمیں بھی ملک کے ساتھ کسی قسم کا سمجھوتہ نہیں کرنا ہے۔عام آدمی پارٹی کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ ہم نے اپنے پچھلے جنم میں کچھ اچھا کام کیا ہوگا، اسی لیے خدا نے ہمیں اتنا بڑا موقع دیا جو عاجز پس منظر سے آئے تھے کہ کوئی ایم ایل اے، کوئی وزیر اور کوئی وزیر اعلیٰ بن گیا۔ ہمیں اسے ایک موقع کے طور پر دیکھنا ہے جو خدا نے ہمیں دیا ہے۔ خدا کسی کو پیسہ دیتا ہے، کسی کو طاقت اور کسی کو کچھ دیتا ہے، لیکن اگر وہ تکبر کرے کہ اسے یہ مقام میری وجہ سے ملا ہے تو وہ شخص تباہ ہو جاتا ہے۔ ہمیں یہ بات ذہن میں رکھنی ہے کہ اللہ تعالیٰ نے ہمیں یہ موقع دوسروں کی خدمت کے لیے دیا ہے، اقتدار کے مزے لینے کا نہیں ہے ۔ لہذا ہمیں اس طاقت کو خدمت میں استعمال کرنا ہے۔ ہمارے سامنے بہت سی رکاوٹیں ہیں۔ کئی ایم ایل اے میرے پاس آتے ہیں اور کہتے ہیں کہ کام نہیں ہو رہا ہے۔ ہم اسے دور کرنے کی پوری کوشش کریں گے۔انہوں نے کہا کہ اگر ہم کامیاب نہ ہوتے تو ہمیں کسی رکاوٹ کا سامنا نہ کرنا پڑتا۔ اگر ہم نے سرکاری اسپتالوں اور اسکولوں میں کام نہ کیا، خواتین کے لیے مفت بس سفر، بجلی اور پانی کی سہولت نہ دی تو کوئی بھی رکاوٹ پیدا کرنے والا نہیں تھا۔ عام آدمی پارٹی سے دہلی کو کوئی نہیں چھین سکتا۔ دہلی کے لوگ عام آدمی پارٹی سے بہت پیار کرتے ہیں۔ اس لیے وہ دہلی کو AAP سے چھیننے میں ضرور رکاوٹیں کھڑی کریں گے۔ وہ جتنی زیادہ رکاوٹیں پیدا کر رہے ہیں، آپ لوگوں کو اتنا ہی خوش ہونا چاہیے کہ ہم کامیاب ہو رہے ہیں اور ان کی نیندیں اڑا رہے ہیں۔ ہم سب کو ان رکاوٹوں پر قابو پا کر خدمت کرنا ہوگی۔ ہمیں ہر ایک کی خدمت کرنی ہے، چاہے وہ بی جے پی یا کانگریس کا حامی ہو۔ ہمیں اپنے کام سے بی جے پی اور کانگریس کے لوگوں کا دل جیتنا ہے۔ ایک دن آئے گا جب دہلی کے ڈھائی کروڑ لوگ عام آدمی پارٹی کے رکن ہوں گے اور ایک دن وہ بھی آئے گا جب ملک کے 140 کروڑ لوگ عام آدمی پارٹی کے رکن ہوں گے۔ عام آدمی پارٹی سے میرا مطلب ملک (ہندوستان) سے ہے، ہمیں ہندوستان کے لیے کام کرنا ہے۔ اگر کل آپ کو ملک اور عام آدمی پارٹی میں سے کسی ایک کا انتخاب کرنا ہے تو عام آدمی پارٹی کو لات مار کر ملک کا انتخاب کریں۔وزیراعلیٰ اروند کیجریوال نے کہا کہ کورونا کے دوران تینوں پارٹیوں کے لوگ ایک دوسرے سے ملے تھے اور بہت اچھے طریقے سے کام کیا تھا۔ ہمیں ہمیشہ ایک ہی احساس رکھنا ہے۔ ہم ایک دوسرے کے دشمن نہیں، ہم ایک ہی ملک کے لوگ ہیں۔ سمجھ میں نہیں آتا کہ ہم ایک دوسرے کے لیے اتنے زہر آلود کیوں ہو گئے ہیں۔ہمارے پاس کچھ نہیں ہے۔ ہمارے پاس نہ پیسہ ہے نہ آدمی، صرف عوام کا احسان ہے۔ دہلی کے سرکاری اسکولوں میں پڑھنے والے 18 لاکھ بچوں کے والدین کا ماننا ہے کہ ہم نے ان کے بچوں کا مستقبل بنایا ہے۔ اس کی برکتیں ہمارے ساتھ ہیں۔ ہم نے حکومت کو کروڑوں لوگوں کو دیا ہے۔اسپتالوں اور محلہ کلینکوں میں مفت علاج کروایا، ان کے احسانات ہمارے ساتھ ہیں۔ یہ ہماری جائیداد ہے۔ ہمیں اپنی جدوجہد جاری رکھنی ہے، ہمیں حوصلہ نہیں ہارنا ہے اور نہ ہی ڈرنے کی ضرورت ہے۔ بابا صاحب کے یوم مہاپری نروان کے موقع پر سب کو یہ حلف لینا چاہیے کہ ہم اپنی آخری سانس تک جدوجہد کرتے رہیں گے۔ بابا صاحب کا ان کی پوری زندگی جدوجہد تھی، وہ آخری سانس تک جدوجہد کرتے رہے۔ بابا صاحب نے سماجی، معاشی اور سیاسی سمیت ہر سطح پر جدوجہد کی۔ ہماری زندگی خود ایک جدوجہد ہے۔ جس دن آپ زندگی میں سمجھوتہ کریں گے اور کمزور ہو جائیں گے، اسی دن آپ کی زندگی ختم ہو جائے گی۔ اس لیے ہمیں سمجھوتہ کرنے کی ضرورت نہیں ہے، ہمیں طاقت کے ساتھ آگے بڑھنا ہے۔ ہم جدوجہد کرتے ہیں ہمیں اپنے اندر خوشی تلاش کرنی ہے۔ جس دن آپ جدوجہد کو اپنی زندگی کا حصہ بنائیں گے، خوشی آنا شروع ہو جائے گی۔وزیراعلیٰ اروند کیجریوال نے بھی اسمبلی میں بابا صاحب کو خراج عقیدت پیش کی۔ وزیراعلیٰ اروند کیجریوال دہلی اسمبلی پہنچے اور احاطے میں نصب مجسمہ پر پھول چڑھا کر بابا صاحب ڈاکٹر بھیم راؤ امبیڈکر کو خراج عقیدت پیش کی۔ وزیراعلیٰ نے ٹویٹ کیا اور کہا، بھارت رتن بابا صاحب ڈاکٹر۔بھیم راؤ امبیڈکر جی کے مہاپری نروان کے دن، انہوں نے دہلی اسمبلی کمپلیکس میں واقع بابا صاحب کے مقدس مجسمے پر پھول چڑھائے۔ ہم سب کو بابا صاحب کے عظیم افکار اور ان کے نظریات سے سیکھ کر ملک کی ترقی میں اپنا حصہ ڈالنا ہے۔اس موقع پر دہلی کے سماجی بہبود کے وزیر راجکمار آنند نے کہا کہ بابا صاحب کا ایک روپ سیاست داں تھا اور دوسرا سماجی مصلح۔ انہیں بعض اوقات ماہر معاشیات اور سماجیات کے ماہر کے طور پر بھی دیکھا جاتا ہے۔ ان کی یہ تمام شکلیں آج بھی غریبوں، مزدوروں، محروموں اور استحصال زدہ لوگوں کے حقوق کی جنگ لڑ رہی ہیں۔ آج اگر ہم آزادی سے جیتے ہیں۔اگر ہم جینے کے قابل ہیں تو یہ بابا صاحب کی جدوجہد کا نتیجہ ہے۔ آزادی کے اتنے سالوں بعد بھی آج محروم طبقات سے تعلق رکھنے والے کھلاڑیوں، مزدوروں اور تاجروں کو دیگر طبقات کے مقابلے زیادہ نقصان اٹھانا پڑ رہا ہے۔ اگر ہم بابا صاحب کے تین سوتروں تعلیم یافتہ رہیں، منظم رہیں اور جدوجہد کو اپنا منتر بنائیں، تو ہم ان کے خوابوں کا ہندوستان حاصل کریں گے۔ جس میں سب کو یکساں مواقع ملیں گے۔ مجھے دہلی حکومت کا حصہ ہونے پر فخر ہے۔ دہلی کی عام آدمی پارٹی کی حکومت نے تعلیم اور صحت پر بہت اچھا کام کیا ہے۔ اس سے دلتوں، پسماندہ لوگوں اور محنت کش طبقے کو فائدہ ہوا ہے۔ دہلی حکومت کی ان تمام اسکیموں سے ہمارے لوگوں کو فائدہ ہوا ہے ۔اب پوری دہلی کو متحد ہونا پڑے گا۔ اگر کوئی جماعت آپ کے لیے اچھا کام کر رہی ہے تو آپ کو بھی آگے آنا ہو گا اور یکطرفہ طور پر ان کا ساتھ دینا ہوگا۔
آپ کے ایس سی؍ایس ٹی ونگ کے ریاستی اور ایم ایل اے صدر وشیش روی، جو اس دوران موجود تھے،انہوں نے کہا کہ ہمیں بابا صاحب کی زندگی کی جدوجہد سے بہت زیادہ ترغیب ملتی ہے۔ ان کی پوری زندگی جدوجہد سے بھری ہوئی ہے۔ اس کے باوجود انھوں نے معاشرے کے لیے بہت سے اہم کام کیے ہیں۔ ہم سب کو غور کرنا چاہیے کہ آج اتنا اچھا ہے۔آج اچھے حالات میں رہتے ہوئے ہمیں بابا صاحب کے افکار کو سمجھ کر اور اپناتے ہوئے معاشرے کے لیے اپنا حصہ ڈالنا چاہیے۔ ہمیں یہ سوچ اپنے ذہن میں رکھنی چاہیے کہ معاشرے کا ہر فرد چاہے وہ کسی بھی مذہب، ذات یا طبقے سے تعلق رکھتا ہو، ہم سب انسان ہیں۔ جس طرح بابا صاحب نے صرف لوگوں کو دیکھا، ہمیں ان کی قرارداد کو اپنانا چاہیے۔آگے بڑھنا چاہیے۔ ہم جہاں بھی ہوں، ہمیں اپنے اپنے شعبوں میں اپنی سطح پر انسانیت کے لیے اپنا حصہ ڈالنا چاہیے۔دریں اثنا، AAP دہلی کے ریاستی نائب صدر اور ایم ایل اے کلدیپ کمار نے کہا کہ بابا صاحب نے ملک کو آئین دیا۔ آئین ہر کسی کے برابری، اظہار رائے، تعلیم اور صحت کے حق کی بات کرتا ہے۔ آج اس ملک میں صرف اروند کیجریوال بابا صاحب کے نظریات کو آگے بڑھانے کا کام کر رہے ہیں، وہ غریبوں کو اچھی خدمات فراہم کر رہے ہیں۔تعلیم اور صحت کی فراہمی کے لیے کام کر رہے ہیں۔ آج ایک غریب آدمی کا بچہ سرکاری اسکولوں میں پڑھ رہا ہے، IIT میں داخلہ لے رہا ہے، NEET کا امتحان پاس کر کے اپنے والدین کا سماج میں فخر کر رہا ہے۔ یہ سب اس لیے ممکن ہوا کیونکہ وزیراعلیٰ اروند کیجریوال نے آئین میں دی گئی تعلیم کو مساوی بنایا۔حقوق کے لیے کام کیا ہے۔ ایک طرف عام آدمی پارٹی کی حکومت ہے جو پورے ملک میں یکساں تعلیم، صحت اور ترقی کی بات کرتی ہے اور دوسری طرف مرکز میں ایک آمرانہ حکومت بیٹھی ہے جو بابا صاحب کے بنائے ہوئے آئین کو ختم کرنا چاہتی ہے۔ ان کی لڑائی آئین کو تباہ کرنے کی ہے، ہماری لڑائی آئین کو بچانے کی ہے۔ اباصاحب نے کہا تھا کہ عوام کو ووٹ کا حق ملنے کے بعد اب بادشاہ ملکہ کی گود سے نہیں عوام کے ووٹوں سے پیدا ہوگا۔ اروند کیجریوال نے بابا صاحب کا خواب پورا کر دیا ہے کہ آج جھاڑو دینے والے کا بیٹا بھی اسمبلی میں جا کر بیٹھ سکتا ہے۔ ہمارے بہت سے ایم ایل اے غریب گھرانوں سے آتے ہیں۔ آج ہم سب کو مل کر آئین کو بچانا ہوگا۔ساتھ کھڑا ہونا ہوگا۔

Related posts

دہلی میں فضائی آلودگی پر تشویش، وزیر اعلی اروند کیجریوال نے ایک اعلیٰ سطحی میٹنگ کی، 13سے 20نومبر تک اور آڈ – ایون نافذ ہوگا:گوپال رائے

Paigam Madre Watan

آپ نے ملک کی سیاسی تبدیلی میں نوجوانوں کو شامل کرنے کے ارادے سے ‘سیاسی تبدیلی کے لیے امبیڈکر فیلوشپ’ کا آغاز کیا: اروند کیجریوال

Paigam Madre Watan

دہلی حکومت کے وزیر راج کمار آنند نے آج کوویڈ واریر آنجہانی انیل کمار گرگ کے اہل خانہ کو 1 کروڑ روپے کا اعزازی چیک سونپا

Paigam Madre Watan

Leave a Comment

türkiye nin en iyi reklam ajansları türkiye nin en iyi ajansları istanbul un en iyi reklam ajansları türkiye nin en ünlü reklam ajansları türkiyenin en büyük reklam ajansları istanbul daki reklam ajansları türkiye nin en büyük reklam ajansları türkiye reklam ajansları en büyük ajanslar