Delhi دہلی

بی جے پی نے دن دیہاڑے بے ایمانی کر کے چنڈی گڑھ کے میئر کا انتخاب جیت لیا، یہ ملک کی جمہوریت کے لیے بہت خطرناک ہے: اروند کیجریوال

نئی دہلی(پی ایم ڈبلیو نیوز)عام آدمی پارٹی نے چندی گڑھ کے میئر انتخابات میں کھلی بے ایمانی پر بی جے پی پر سخت حملہ کیا۔ AAP کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے سلسلہ وار انداز میں اس کا انکشاف کیا۔ انہوں نے کہا کہ میئر کے انتخابات میں بی جے پی کو دن دیہاڑے بے ایمانی کرکے فتح دلائی گئی۔ یہ ملک کی جمہوریت کے لیے غنڈہ گردی انتہائی خطرناک ہے۔ اگر یہ لوگ میئر کے انتخاب میں اتنے نیچے جاسکتے ہیں تو ملکی انتخابات میں کسی بھی حد تک جاسکتے ہیں۔ یہ انتہائی تشویشناک ہے۔ 76 سال قبل 30 جنوری کو عدم تشدد کے پجاری مہاتما گاندھی کو قتل کر دیا گیا تھا اور اسی دن انہوں نے جمہوریت کا قتل کیا تھا۔ انہوں نے کہا کہ ان کی نیتیں شروع سے ہی خراب تھیں۔ جب انتخابات کا اعلان ہوا تو انہوں نے اپنی پارٹی کے عہدیدار کو پریزائیڈنگ آفیسر قرار دیا اور انہوں نے جان بوجھ کر ہمارے 20 ووٹوں میں سے 8 کو ٹک کا نشان لگا کر باطل کر دیا۔ انہوں نے اہل وطن سے اپیل کرتے ہوئے کہا کہ اگر اس غنڈہ گردی کو نہ روکا گیا تو یہ مستقبل میں ملک کے لیے تباہی کا باعث بنے گا۔بہت خطرناک ثابت ہونے والا ہے۔آپ کے قومی کنوینر اور دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال نے میئر کی کرسی پر قبضہ کرنے کے لئے چندی گڑھ کے میئر کے انتخاب میں بی جے پی کی دھاندلی پر پارٹی ہیڈکوارٹر میں ایک پریس کانفرنس میں اپنے خیالات کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا کہ 30 جنوری کو عدم تشدد اور امن کے پجاری مہاتما گاندھی کا قتل ہوا اور اس ہی دن 76 سال بعدانہوں نے جمہوریت کا قتل کیا ہے۔ ایک طرح سے آج کا دن جمہوریت کے لیے سیاہ دن ہے۔ چندی گڑھ کے میئر کے انتخابات میں اس نے جس طرح کھلے عام غنڈہ گردی اور بے ایمانی کی وہ ویڈیو میں قید ہوئی ہے۔ آج پورا ملک سوشل میڈیا پر وہ ویڈیو دیکھ رہا ہے کہ انہوں نے ووٹ کیسے چرائے اور چنڈی گڑھ کے اندر انہوں نے زبردستی خود کو میئر بنا رکھا ہے۔آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ مسئلہ یہ نہیں ہے کہ کون میئر بنے۔ الیکشن میں جیت اور ہار ہوتی ہے۔ کبھی وہ جیت جاتے ہیں اور کبھی ہم جیت جاتے ہیں۔ لیکن ملک اور جمہوریت کو شکست نہیں ہونی چاہیے، ملک اور جمہوریت ضروری ہے۔ پارٹیاں آتی جاتی ہیں، لیڈر آتے جاتے ہیں، میئر آتے جاتے ہیں۔ مسئلہ یہ نہیں ہے کہ عام آدمی پارٹی کو میئر بننا تھا، لیکن نہیں بنا۔ مسئلہ یہ بھی نہیں ہے کہ انڈیا الائنس کو چندی گڑھ کے میئر کا انتخاب جیتنا تھا اور وہ جیت نہیں سکی۔ مسئلہ یہ ہے کہ ان لوگوں نے دن دیہاڑے ایسی غنڈہ گردی اور بے ایمانی سے چندی گڑھ کے میئر کا انتخاب جیتا ہے۔ اگر پورا ملک ایک ساتھ اگر ان کی غنڈہ گردی اور بے ایمانی نہ روکی گئی تو یہ پورے ملک کے لیے بہت خطرناک ہے۔انہوں نے کہا کہ چندی گڑھ میونسپلٹی کے انتخابات دو سال قبل ہوئے تھے۔ بلدیہ میں کونسلر کی کل 36 نشستیں ہیں۔ اس الیکشن میں عام آدمی پارٹی کے 13، کانگریس کے 7، بی جے پی کے 15 اور اکالی دل کے ایک کونسلر ہیں۔ اکالی دل کے کونسلر بی جے پی کے ساتھ ہیں۔ اس طرح بی جے پی کے پاس کل 16 کونسلر ہیں۔ اب تک کانگریس اور عام آدمی پارٹیاں الگ الگ الیکشن لڑتی تھیں۔ اس لیے پچھلے دو سالوں سے صرف بی جے پی کے پاس میئر اور ڈپٹی میئر تھے۔ اس بار کانگریس اور عام آدمی پارٹی انڈیا الائنس کے تحت اکٹھے ہوئے۔ اس طرح انڈیا الائنس کے پاس 20 اور بی جے پی کے 16 کونسلر تھے۔ انتخاب کافی سیدھا تھا۔ اس میں کوئی ریاضی نہیں تھا۔آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ چندی گڑھ میئر کے انتخاب کے حوالے سے ان کے ارادے شروع سے ہی خراب تھے۔ سب سے پہلے ان لوگوں نے اپنی پارٹی کے ایک عہدیدار کو پریزائیڈنگ آفیسر قرار دیا۔ اس کے بعد میئر کے انتخاب کے لیے 18 جنوری کی تاریخ مقرر کی گئی۔ انتخابات کے دن 18 جنوری کی صدارت افسر نے کہا کہ میں بیمار ہوں۔ انہیں اسپتال میں داخل کرایا گیا اور بالآخر الیکشن ملتوی کر دیا گیا۔ ہم عدالت گئے اور عدالت کی تاریخ طے کرائی۔ اس دوران انہوں نے عام آدمی پارٹی اور کانگریس کے مشیروں کو خریدنے اور دھمکانے کی بہت کوشش کی۔ جیسا کہ وہ پورے ملک میں کرتے ہیں۔ یہ ان کی فطرت اور ہر جگہ وہ کرتے ہیں۔ لیکن خوش قسمتی سے ہمارا ایک بھی کونسلر نہیں ٹوٹا اور میئر کا انتخاب منگل (30) کو ہوا اور عدالتی ہدایات کے باوجود یہ لوگ بدتمیزی میں ملوث رہے۔آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ چاہے وہ ریاستی انتخابات ہوں یا قومی انتخابات، جب ووٹوں کی گنتی ہوتی ہے تو مشین کا نمبر دکھایا جاتا ہے۔ اس کے بعد دکھایا جاتا ہے کہ ہر پارٹی کو کتنے ووٹ ملے اور تمام پارٹیوں کا ایجنڈا صاف نظر آتا ہے۔ میئر کے انتخابات میں بھی یہ قانون میں تھا۔کہ وہاں ہر پارٹی کا ایجنٹ بیٹھے گا۔ جس طرح دہلی میں میئر کا انتخاب ہوا، جو کہ بیلٹ پیپر کے ذریعے کیا جاتا ہے۔ گنتی کے دوران تمام پارٹیوں کے ایجنٹ بیٹھتے ہیں اور ہر ووٹ انہیں دکھایا جاتا ہے۔ اگر کوئی ایجنٹ اعتراض کرنا چاہے کہ یہ ووٹ غلط ہے تو وہ ووٹ تمام ایجنٹوں کو دکھایا جاتا ہے۔ اس پر تمام ایجنٹ دلائل دیے جاتے ہیں اور پریزائیڈنگ آفیسر اس پر اپنا فیصلہ سناتا ہے۔آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ چندی گڑھ میئر کے انتخابات میں جس بی جے پی کارکن کو پریذائیڈنگ آفیسر بنایا گیا تھا، اس نے کسی ایجنٹ کو اپنے قریب نہیں آنے دیا۔ پریزائیڈنگ افسر نے تمام ایجنٹوں کو ہٹا دیا اور خود تمام ووٹ لے کر بیٹھ گئے۔ یہ کیمرے کے اندر واضح طور پر نظر آتا ہے کہ کیسیپریزائیڈنگ آفیسر انڈیا اتحاد کے ووٹ کو ٹک مارک کر کے باطل قرار دے رہا ہے۔ یعنی اگر دو ٹک مارکس لگائے جائیں تو وہ ووٹ باطل ہو جائے گا۔ پریزائیڈنگ آفیسر نیچے نشان لگا کر اور دستخط کر کے ووٹ کو باطل قرار دے رہا ہے۔ پکڑی گئی ویڈیو میں واضح طور پر دیکھا جا سکتا ہے کہ پریزائیڈنگ افسر نے خود کچھ ووٹ ڈالے۔اس پر ٹک مارک لگانا اور کسی چیز پر دستخط کرنا۔ کل 36 ووٹ ڈالے جانے تھے۔ 36 میں سے 20 انڈیا الائنس اور 16 بی جے پی کے تھے۔ بی جے پی کو 16 ووٹ ملے اور پریذائیڈنگ آفیسر نے انڈیا الائنس کے 20 ووٹوں میں سے 8 کو باطل قرار دیا۔ اس طرح 25 فیصد ووٹ کالعدم قرار دیے گئے۔انہوں نے کہا کہ گزشتہ سال جب میئر کا انتخاب ہوا تھا تو عام آدمی پارٹی کا ایک ووٹ باطل قرار دیا گیا تھا۔ اس لیے ایسا نہیں ہے کہ ہمارے کونسلرز ووٹ ڈالنا نہیں جانتے۔ وہ ووٹ دینا جانتے ہیں۔ اس بار یہ کیسے ہوا کہ ہمارے تمام کونسلر ووٹ ڈالنا بھول گئے اور سارے ووٹ باطل ہو گئے۔ انہوں نے کہا تھا کہ غنڈہ گردی کرنی ہے۔ خوش قسمتی سے سب کچھ کیمرے میں قید ہوگیا۔آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ چندی گڑھ کے میئر کے انتخابات میں یہ بھی بہت دلچسپ ہے کہ کل چنڈی گڑھ انتظامیہ نے انتخابات سے قبل ایک حکم جاری کیا اور میڈیا کے داخلے پر پابندی لگا دی۔ اس حکم سے یہ بھی معلوم ہوتا ہے کہ گڑبڑ پیدا کرنے کے لیے ان کی نیت شروع سے ہی خراب تھی۔چنڈی گڑھ کے میئر کے انتخابات میں اب تک بڑے پیمانے پر ووٹوں کو باطل قرار نہیں دیا گیا۔ اگر یہ لوگ صرف 36 ووٹوں کی گنتی میں اتنی بڑی دھاندلی کر رہے ہیں، جب ملک میں الیکشن ہوتے ہیں، 90 کروڑ ووٹ ڈالے جاتے ہیں، تو پتہ نہیں یہ لوگ کس درجے کی دھاندلی کرتے ہیں۔ ملک کے انتخابات میں اگر 5-6 فیصد ووٹ بھی ادھر ادھر ہو جائیں تو نتائج میں بڑا فرق ہو سکتا ہے۔انہوں نے کہا کہ چندی گڑھ کے میئر کا انتخاب ظاہر کرتا ہے کہ یہ لوگ الیکشن جیتنے اور اقتدار حاصل کرنے کے لیے کس حد تک جا سکتے ہیں۔ لوگ کہہ رہے ہیں کہ بڑے انتخابات میں ای وی ایم میں بے ضابطگیاں ہوئی ہیں۔ میرے خیال میں یہ لوگ اقتدار حاصل کرنے کے لیے کچھ بھی کرتے ہیں۔ یہ لوگ الیکشن جیتنے کے لیے ووٹر لسٹ میں فراڈ کر رہے ہوں گے۔ہو سکتا ہے کہ وہ جعلی ووٹ ڈال رہے ہوں، ای وی ایم کے ساتھ چھیڑ چھاڑ کر رہے ہوں۔ اگر یہ لوگ اس سب کے بعد بھی الیکشن ہار گئے تو ٹرمپ کی طرح اقتدار کی کرسی نہیں چھوڑیں گے۔ یہ لوگ اپنی نشستوں پر چپکے رہیں گے چاہے ملک میں مارشل لاء کیوں نہ لگانا پڑے۔ یہ صورتحال پورے ملک کے لیے انتہائی خطرناک ہے۔ میری تمام لوگوں سے اپیل ہے کہ جو لوگ اپنے ملک سے محبت کرنے والے تمام لوگوں کو اکٹھا ہو کر اس غنڈہ گردی کی بھرپور مخالفت کرنا ہو گی اور اسے کسی بھی قیمت پر روکنا ہوگا۔ کیونکہ غنڈہ گردی کر کے اقتدار میں آنے والے ہی آپ کے شہر میں غنڈہ گردی پیدا کریں گے۔ جو لوگ ایمانداری سے الیکشن لڑیں گے اور جیتیں گے وہ حکمرانی میں ایمانداری لائیں گے۔آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے ٹویٹ کیا، "بی جے پی کو دن کی روشنی میں چندی گڑھ کے میئر کے انتخاب میں بے ایمانی سے جیت دلائی گئی۔ یہ غنڈہ گردی ملک کی جمہوریت کے لیے بہت خطرناک ہے۔ چنڈی گڑھ کے میئر کے انتخابات میں جس طرح سے دن دیہاڑے بے ایمانی کی گئی ہے وہ انتہائی تشویشناک ہے۔ اگر یہ لوگ میئر کے الیکشن میں اتنا گر سکتے ہیں تو ملکی انتخابات میں کسی بھی حد تک جا سکتے ہیں۔ یہ بہت تشویشناک ہے۔

Related posts

लोगों को रोजगार उपलब्ध कराने की दिशा में व्यावसायिक प्रशिक्षण पहल को बढ़ावा देने के लिए एमईपी की प्रतिबद्धता

Paigam Madre Watan

ایل جی صاحب کے خصوصی وکیل اور ان کے خصوصی وکلاء نے عدالت میں اروند کیجریوال کی طرف سے ادویات اور انسولین کے مطالبے کی مخالفت کی: آتشی

Paigam Madre Watan

آج ارکان پارلیمنٹ کو ایوان سے معطل نہیں کیا گیا، جمہوریت معطل ہوئی ہے: راگھو چڈھا

Paigam Madre Watan

Leave a Comment

türkiye nin en iyi reklam ajansları türkiye nin en iyi ajansları istanbul un en iyi reklam ajansları türkiye nin en ünlü reklam ajansları türkiyenin en büyük reklam ajansları istanbul daki reklam ajansları türkiye nin en büyük reklam ajansları türkiye reklam ajansları en büyük ajanslar