Delhi دہلی

اس پالیسی کے تحت، اگر 400 یونٹ سے زیادہ بجلی استعمال کرنے والے صارفین چھتوں پر سولر لگاتے ہیں، تو ان کا بل صفر ہو جائے گا: آتشی

نئی دہلی، دہلی کے وزیر توانائی آتشی نے ایل جی کی جانب سے کیجریوال حکومت کی سولر پالیسی 2024 کو روکنے پر سخت اعتراض ظاہر کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایل جی صاحب بی جے پی کی طرف سے بیٹنگ کر رہے ہیں۔ اس لیے انہوں نے ایسی ترقی پسند سولر پالیسی 2024 کی فائل روک دی ہے۔ اس پالیسی کو لانے کے پیچھے حکومت کا مقصد دہلی میں سبز توانائی کو فروغ دینا اور دہلی والوں کے بجلی کے بل کو صفر پر لانا ہے۔ اگر کوئی صارف 400 یونٹ سے زیادہ بجلی استعمال کر رہا ہے تو اس پالیسی کے تحت وہ اپنے گھر کی چھت پر سولر پینل لگا کر اپنے بجلی کے بل کو صفر تک کم کر سکتا ہے۔ ایل جی صاحب کا پالیسی پر غیر ضروری سوالات اٹھانے کا سیدھا مقصد ضابطہ اخلاق کے نفاذ سے پہلے اسے نافذ ہونے سے روکنا ہوگا۔ اپنے آئینی عہدے کے وقار کو بھول کر ایل جی انتخابات میں بی جے پی کو ووٹ حاصل کرنے کی ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں۔ دوسری طرف، اسمبلی کے جاری بجٹ اجلاس میں، AAP ایم ایل اے راجیش گپتا نے سولر پالیسی پر ایک مذمتی تحریک پیش کی، جسے صوتی ووٹ سے منظور کر لیا گیا۔سولر پالیسی کو روکے جانے پر دہلی کی وزیر توانائی آتشی نے بدھ کو ایک پریس کانفرنس میں کہا کہ 29 جنوری 2024 کو کیجریوال حکومت نے اپنی کابینہ میں نئی سولر پالیسی پاس کی۔ اس سولر پالیسی کو ملک کی بہترین اور ترقی پسند پالیسی کے طور پر سراہا گیا۔ یہ ایک پالیسی ہے جو دہلی میں رہنے والے 400 یونٹ سے زیادہ استمال کرنے والے لوگوں پر لاگو ہوتی ہے۔اس میں اس بات کو یقینی بنانے کا بندوبست کیا گیا ہے کہ یونٹ سے زیادہ بجلی استعمال کرنے والوں کو بھی صفر بجلی کا بل مل سکے۔انہوں نے کہا کہ دہلی میں فی الحال حکومت 200 یونٹ تک مفت بجلی فراہم کرتی ہے اور 200-400 یونٹ تک 50 فیصد سبسڈی دیتی ہے۔ لیکن پہلی بار اس پالیسی کے ذریعے 400 یونٹ سے زیادہ بجلی استعمال کرنے والے صارفین کے بل کو صفر تک لایا جا سکتا ہے، اس لیے یہ فطری تھا کہ دہلی کے لوگوں نے اس کا خیر مقدم کیا اور جب وزیر اعلیٰ نے اس اسکیم کا اعلان کیا تو دہلی کے مختلف حصوں کے لوگوں نے پوچھنا شروع کیا کہ وہ اس پالیسی کے تحت سولر پینل کب لگا سکتے ہیں۔توانائی کی وزیر آتشی نے کہا کہ اس پالیسی کی دوسری اہم شق یہ ہے کہ سولر پالیسی کے تحت حکومت چھت پر سولر لگانے والے صارفین کو ہر یونٹ کی پیداوار پر رقم دے گی۔ حکومت 3 کلو واٹ تک بجلی کی پیداوار پر 3 روپے فی یونٹ اور 3 کلو واٹ سے 10 کلو واٹ تک 3 روپے فی یونٹ دے گی۔2 روپے دیے جائیں گے۔ اس طرح نہ صرف صارف کا بجلی کا بل صفر ہو جائے گا بلکہ وہ اپنی چھت پر لگائے گئے روف ٹاپ سولر پاور پلانٹ سے بھی پیسے کما سکتا ہے۔انہوں نے کہا کہ یہ ایک ایسا مہتواکانکشی منصوبہ ہے کہ دہلی کی بڑھتی ہوئی بجلی کی طلب کے باوجود اس پالیسی کے ذریعے ہمارا ہدف ہے کہ 2027 تک دہلی میں استعمال ہونے والی بجلی کا 50 فیصد شمسی توانائی کے ذریعے آئے گا، جو شاید کسی بھی دوسرے سے زیادہ ہو گا۔ وزیر توانائی آتشی نے کہا کہ یہ پالیسی 29 جنوری کو پاس ہوئی تھی، 1-2 دن بعد کابینہ کے فیصلے کا نوٹیفکیشن آیا اور پھر محکمہ توانائی نے اسے ایل جی صاحب کو بھیج دیا۔ لیکن یہ بہت افسوسناک ہے کہ ایل جی صاحب کی ایسی بہترین سولر پالیسی، جس سے دہلی کے لوگوں کو فائدہ پہنچے گا، جس سے ماحولیات کو فائدہ ہوگا۔جس سے آلودگی میں کمی آئے گی۔ ایل جی صاحب پہلے یہ فائل لے کر بیٹھ گئے اور کئی دنوں تک واپس نہیں بھیجے۔ میں نے ذاتی طور پر ایل جی آفس سے بار بار بات کی اور ان سے کہا کہ وہ مجھے مطلع کریں کہ فائل کب واپس کی جائے گی۔ جب ایل جی صاحب ہماری بار بار کہنے کے بعد بھی اس فائل کو نہیں روک سکے۔انہوں نے فحش سوالات کر کے اس فائل کو روک دیا۔انہوں نے کہا کہ ان اعتراضات کو لگانے کا سیدھا مطلب یہ ہے کہ اب جب اعتراضات ملنے کے بعد فائل واپس آ گئی ہے تو یہ ایک افسر سے دوسرے افسر کے پاس جائے گی، اس سے دوسرے افسر کے پاس جائے گی اور فائل گھومتی رہے گی۔ اس اعتراض کو اٹھانے کا مقصد صرف یہ ہے کہ اس پالیسی کو روکا جائے اور اگلے ماہ آنے والے ضابطہ اخلاق کو نافذ کیا جائے۔پہلے اس پالیسی کو مطلع کرنے کی اجازت نہ دی جائے۔انہوں نے کہا کہ اگر یہ سولر پالیسی لاگو ہوتی ہے تو دہلی کے لوگوں کو اس کا فائدہ ہوگا، دہلی کے لوگ اروند کیجریوال سے خوش ہوں گے، ان کی پالیسیوں سے خوش ہوں گے اور انہیں ووٹ دیں گے۔ صرف اس لیے کہ آج ایل جی صاحب اس شہر کے اعلیٰ ترین آئینی عہدہ پر فائز ہونے کے باوجود اپنے عہدے کے وقار کو بھول کر بی جے پی کا ساتھ دے رہے ہیں۔سائیڈ سے بیٹنگ کر رہے ہیں۔ آج وہ انتخابات میں بی جے پی کو ووٹ حاصل کرنے کی ہر ممکن کوشش کر رہے ہیں۔توانائی کی وزیر آتشی نے ایل جی سے درخواست کی کہ دہلی سولر پالیسی ایک بہترین پالیسی ہے۔ اس سے نہ صرف دہلی کے لوگوں کو فائدہ پہنچے گا بلکہ آلودگی میں بھی کمی آئے گی۔ اس لیے اس پالیسی پر سیاست نہ کریں، اسے روکنے کی کوشش نہ کریں اور نہ تاخیر کریں۔ یہ سولر پالیسی دہلی کے لوگوں کے حق میں ہے اور دہلی کے ایل جی ہونے کی وجہ سیایک حکومت کے طور پر، یہ آپ کی اخلاقی ذمہ داری ہے کہ دہلی کے لوگوں کے حقوق کے لیے کوئی پالیسی پاس کریں۔سولر پالیسی روکنے پر ایوان میں مذمتی تحریک منظور کر لی گئی۔بدھ کے روز، وزیر پور کے ایم ایل اے راجیش گپتا نے اسمبلی میں اروند کیجریوال حکومت کی سولر پالیسی کو دہلی کے ایل جی کی طرف سے روکنے کے حوالے سے ایک مذمتی تحریک پیش کی، جسے صوتی ووٹ سے منظور کر لیا گیا۔ شمسی پالیسی پر بات کرتے ہوئے توانائی کی وزیر آتشی نے کہا کہ دہلی کے لوگوں کو 400 یونٹ سے زیادہ کی کھپت پر بجلی ملے گی۔مفت میں حاصل کر سکتے ہیں۔ اس کے لیے کیجریوال حکومت ایک بہترین سولر پالیسی لے کر آئی تھی۔ لیکن ایل جی جو کہ بی جے پی کی طرف سے سیاست کر رہے ہیں اور اپوزیشن کا کردار ادا کر رہے ہیں، اس پالیسی کو روک رہے ہیں۔ اسے روکنے کا مقصد لوک سبھا انتخابات کے ضابطہ اخلاق کے نافذ ہونے سے پہلے کیجریوال کی سولر پالیسی کو شروع ہونے سے روکنا ہے۔

Related posts

جن سمواد میں عوام نے کہا، بی جے پی وزیر اعلی اروند کیجریوال کے مفاد عامہ کے کام کو برداشت نہیں کر پارہی ہے: راج کمار آنند

Paigam Madre Watan

میں اندر ہوں یا باہر، ملک کی خدمت کرتا رہوں گا، میری زندگی کا ہر لمحہ ملک کے لیے وقف ہے: کیجریوال

Paigam Madre Watan

بھارتیہ جنتا پارٹی دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال سے خوفزدہ ہیں اور اسی لیے انہیں جھوٹے مقدمے میں گرفتار کرنا چاہتی ہے: سوربھ بھردواج

Paigam Madre Watan

Leave a Comment

türkiye nin en iyi reklam ajansları türkiye nin en iyi ajansları istanbul un en iyi reklam ajansları türkiye nin en ünlü reklam ajansları türkiyenin en büyük reklam ajansları istanbul daki reklam ajansları türkiye nin en büyük reklam ajansları türkiye reklam ajansları en büyük ajanslar