Articles مضامین

اسلام میں پیڑ پودوں کی اہمیت اور ماحولیاتی مسائل کا حل

مفتی ندیم احمد انصاری
کائنات میں اللہ تعالیٰ کی شانِ ربوبیت کا ایک مظہر یہ بھی ہے کہ جہاں انسانوں اور دوسرے جان داروں کو اور بہت سی نعمتوں سے نوازا، وہیں اسے سازگار ماحول بھی عطا کیا گیا اور ایسی چیزیں پیدا کی گئیں جو کثافتوں کو جذب کرلیتی ہیں اور مختلف النوع آلودگیوں سے ماحول کو بچاتی ہیں۔ انسانی زندگی اور انسان کو مطلوب جان دار اور بے جان وسائل کی حفاظت کے لیے یہ ضروری ہے کہ انسان ماحولیات کا تحفظ کرنے کا اہتمام کرے اور ایسی چیزوں سے بچے جو فضا، زمین، پانی وغیرہ میںآلودگی کا باعث بنتی ہیں۔
موجودہ تیز رفتار صنعتی ترقی سے پہلے جنگلات کی کثرت اور مظاہرِقدرت سے چھیڑ چھاڑ نہ کرنے کے باعث آلودگی کا مسئلہ اتنا اہم نہیں تھا، لیکن اب کارخانوں کی کثرت، صنعتی فضلات کی نکاسی کے مناسب انتظام سے غفلت، آبادی کا پھیلاؤ، آلودگی پیدا کرنے والے ایندھن کا بے دریغ استعمال، جنگلات کی بے تحاشہ کٹائی، دریاؤں میں فضلات کا بہاؤ، پُرشور سواریوں اور مشینوں کا استعمال اور اس طرح کے مختلف اسباب کی وجہ سے ماحولیات میں عدم توازن پیدا ہوتا جا رہا ہے۔ آلودگی بڑھ رہی ہے اور اس کی وجہ سے طرح طرح کی بیماریاں اور مشکلیں جنم لے رہی ہیں۔ یہ وہ صورتِ حال ہے جس نے پوری دنیا کو فکر مند کر رکھا ہے۔کہیں گرمی کی شدت ہے تو کہیں باڑھ آئی ہوئی ہے۔ آکسیجن کی قلت کا مسئلہ جو منھ کھولے ہمارے سامنے کھڑا ہے، وہ بھی اسی کی دین ہے۔
شریعتِ اسلامی انسانی زندگی کے تمام مسائل کا احاطہ کرتی ہے ،اس سلسلے میں بھی اس نے ہماری رہنمائی کی ہے ، جیسے پانی میں استنجا کرنے سے منع کیا گیا، شجرکاری کی ترغیب دی۔ یہاں تک کہ بلا وجہ درخت کاٹنے اور بلند آواز تک کو پسند نہیں کیا۔جو چیزیں دھواں چھوڑنے والی ہوں،ان کو ضرورت پوری ہونے کے بعد بجھا دینے کی ہدایت دی گئی۔ یہ اور اس طرح کی بہت سی تعلیمات ہیں، جو صراحتاً یا اشاراتاً قرآن و حدیث میں وارد ہوئی ہیں اور ان کی بنیاد پر فقہا نے احکامات مستنبط کیے ہیں۔
اس تمہید کے ساتھ فقہ اکیڈمی، انڈیا نے ایسے چند اہم مسائل پر باقاعدہ سیمینار کروایا تھا، جس میں ملک بھر کے اصحابِ علم و قلم نے شرکت کی۔ راقم السطور نے بھی طویل مقالہ پیش کیا، پیڑ پودوں کی اہمیت سے متعلق سوال و جواب کا حصہ یہاں پیش کیا جا رہا ہے، جس سے اندازہ ہوگا کہ اسلام نے تمام مسائل میں کس درجے باریک بینی سے کام لیا اور انسانی ضرورت و ماحولیات کا لحاظ رکھاہے۔
زراعت اور کھیتی باڑی کی ترغیب
اسلام کی نظر میں درخت لگانے اور کاشت کاری کی بڑی اہمیت ہے، اللہ سبحانہ و تعالیٰ کا ارشاد ہے :وَاِذَا تَوَلّٰی سَعٰی فِی الْاَرْضِ لِیُفْسِدَ فِیْھَا وَیُھْلِکَ الْحَرْثَ وَالنَّسْلَ، وَاللّٰہُ لَا یُحِبُّ الْفَسَادَ ۔ اور جب اٹھ کرجاتا ہے تو زمین میں اس کی دوڑ دھوپ یہ ہوتی ہے کہ و ہ اس میں فساد مچائے اور فصلیں اور نسلیں تباہ کرے ، حالاں کہ اللہ فساد کو پسند نہیں کرتا۔(البقرۃ)اس آیت کے ذیل میں علامہ قرطبیؒ نے لکھا ہے کہ یہ آیت زمین میں ہل چلانے اور اس میں فصل کاشت کرنے اور زمین میں درخت لگانے پردلالت کرتی ہے۔ یہ زراعت اور کھیتی باڑی پر ابھارنے کے لیے ہے اور طلبِ نسل سے مراد حیوانوں اور جان داروں کی نشوونما اور ان کا بڑھنا ہے اور اسی سے انسان کی قوت و طاقت مکمل ہوتی ہے۔(احکام القرآن)
شجرکاری کی فضیلت
حضرت جابرؓسے روایت ہے ، رسول اللہ ﷺ نے فرمایا: جس مسلمان نے کوئی پودا لگایا تو اس درخت سے جو کھایا گیا وہ اس کے لیے صدقہ ہے ، جو اس سے چوری کیا گیا وہ بھی اس کے لیے صدقہ ہے ، اور جو درندوں نے کھایا وہ بھی اس کے لیے صدقہ ہے ، اور کوئی اسے کم نہیں کرے گا، مگر وہ اس پودا لگانے والے کے لیے صدقے کا ثواب ہوگا۔(مسلم)ایک روایت میں ہے کہ حضرت نبی کریم ﷺ ام مبشر انصاریہؓکے پاس ان کے باغ میں تشریف لے گئے ۔ رسول اللہ ﷺ نے ان سے فرمایا: یہ باغ مسلمان نے لگایا ہے یا کافر نے ؟ انھوں نے کہا: مسلمانوں نے۔ آپ ﷺ نے فرمایا: کوئی مسلمان ایسا نہیں جو کوئی پودا لگائے یا کھیتی کاشت کرے اور اس سے انسان یا جانور یا کوئی بھی کھائے تو اس کے لیے صدقے کا ثواب ہوگا۔(بخاری،مسلم)حضرت جابر بن عبداللہؓ ہی کی ایک روایت میں اس طرح ہے: میں نے رسول اللہ ﷺ کو فرماتے ہوئے سنا کہ پودا لگانے والا اور کھیتی کرنے والا کوئی ایسا مسلمان نہیں کہ اس سے درندے یا پرندے یا اور کوئی کھائے، مگر یہ کہ اس میں اس لگانے والے کے لیے ثواب ہوگا۔(مسلم)ایک حدیث میں شجرکاری کی ترغیب دیتے آپ ﷺنے ارشاد فرمایا:جو شخض پودا لگائے گا اس کے لیے اس پودے سے نکلنے والے پھل کے بہ قدر ثواب لکھاجائےگا۔(مسند احمد)اسی لیے علما نے افضل ترین پیشے کے طور پر کاشت کاری کا ذکر کیا ہے۔(شرحِ منہاج)
بلا شدید ضرورت پیڑوں کو کاٹنا
بلا ضرورت جنگلات کو کاٹنے اور کھیتوں کو زیادہ پیسوں کے حصول کے لیے پلاٹس بنا کر آبادیوں کو بسانا، غیر اخلاقی و مکروہ فعل قرار دیا گیا ہے۔ عبداللہ بن حبشیؓسے مروی ہے ،رسول اللہﷺ کا ارشادِ گرامی ہے :جو کسی بیری کے درخت کو کاٹے گا، اللہ تعالیٰ جہنم میں اس کے سر کو اوندھا کردے گا۔(ابو دائود، سنن کبریٰ)نیز رسول اللہ ﷺنے جنگ کے موقعوں پر بھی درختوں اور کھیتیوں کو بربادر کرنے سے منع فرمایاہے۔(مصنف عبد الرزاق)امیر المؤمنین حضرت ابوبکرصدیقؓنے شام کی طرف لشکر روانہ کرتے وقت تاکید کی تھی: دشمن کے کھجور کے باغات ہرگز نہ کاٹے اور جلائے جائیں۔(مصنف عبد الرزاق)

Related posts

नीतीश जी लें सम्मानजनक विदाई

Paigam Madre Watan

مالی شمولیت کے از سر نو تصور کا افتتاح ہیرا گروپ: ایک اخلاقی مالیاتی استحکام کی علامت

Paigam Madre Watan

हज़रत मौलाना गुलाम फ़रीद आज़ाद (क़ैसर) इंकलाबी ख़तीब शायर व अज़ीम मुजाहिदे आज़ादी एक तआरुफ़

Paigam Madre Watan

Leave a Comment

türkiye nin en iyi reklam ajansları türkiye nin en iyi ajansları istanbul un en iyi reklam ajansları türkiye nin en ünlü reklam ajansları türkiyenin en büyük reklam ajansları istanbul daki reklam ajansları türkiye nin en büyük reklam ajansları türkiye reklam ajansları en büyük ajanslar