Delhi دہلی

وزیر اعلی اروند کیجریوال نے دہلی کے ایک سرکاری اسکول میں ایک شاندار آڈیٹوریم کا افتتاح کرنے کے بعد کہا، "ہر بچے کو یکساں اچھی تعلیم ملنی چاہیے، یہ ہماری کوشش ہے۔”

یہ بدقسمتی ہے کہ ہمارے ملک میں دو طرح کا نظام تعلیم ہے، امیر کے بچے پرائیویٹ اسکول جاتے ہیں اور غریب کے بچے سرکاری اسکول جانے پر مجبور ہیں


وزیر اعلی اروند کیجریوال کی قیادت میں حکومت نے بچوں کو اعلیٰ ترین معیاری تعلیم فراہم کرنے میں کوئی کسر نہیں چھوڑی ہے: آتشی


نئی دہلی(پی ایم ڈبلیو نیوز) وزیر اعلی اروند کیجریوال نے پیر کو ڈاکٹر بی آر امبیڈکر اسکول آف اسپیشلائزڈ ایکسی لینس میں جدید ترین سہولیات سے آراستہ ایک نئے تعمیر شدہ آڈیٹوریم کا افتتاح کیا۔ اس میں اسپیکر سسٹم، سب ووفر، اسٹیج مانیٹرنگ سسٹم، 335 افراد کے بیٹھنے کی گنجائش کے ساتھ وائرلیس پریزنٹیشن سمیت تمام سہولیات موجود ہیں۔ آئندہ سیشن سے اس اسکول میں پرفارمنگ اور ویژولجب آرٹس پروگرام شروع ہوگا، بچوں کو ہائی ٹیک اسٹیج پر پرفارم کرنے کا موقع ملے گا۔ وزیر اعلی اروند کیجریوال نے کہا کہ ہماری حکومت اس بات کو یقینی بنانے کی کوشش کر رہی ہے کہ ہر طبقہ کے بچوں کو یکساں اور اچھی تعلیم ملے۔ لیکن یہ بہت بدقسمتی کی بات ہے کہ ہمارے ملک میں دو طرح کے نظام تعلیم ہیں۔ جن کے پاس پیسہ ہیجو لوگ پرائیویٹ اسکولوں میں جاتے ہیں وہ پڑھتے ہیں اور جن کے پاس پیسے نہیں وہ سرکاری اسکولوں میں جانے پر مجبور ہیں۔ انہوں نے خوشی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ہماری حکومت نے گزشتہ 8 سالوں میں تعلیمی میدان میں انقلابی تبدیلیاں لا کر اس تاثر کو بدل دیا ہے۔ اس کے علاوہ، اب کوئی حکومت یہ نہیں کہہ سکتی حکومت اسکول نہیں چلا سکتی، کیونکہ ہم نے انہیں چلا کر دکھایا ہے۔ اس موقع پر وزیر تعلیم آتشی، مقامی ایم ایل اے پرلاد سنگھ اور محکمہ تعلیم کے افسران موجود رہے۔سول لائنز میں راج نواس مارگ پر واقع ڈاکٹر بی.آر. امبیڈکر اسکول آف اسپیشلائزڈ ایکسی لینس کے نئے تعمیر شدہ شاندار آڈیٹوریم کی افتتاحی تقریب میں اسکول کے بچوں نے ثقافتی پروگرام پیش کرکے سب کو مشہور کردیا۔ بچوں کی پریزنٹیشن دیکھ کر وزیر اعلی اروند کیجریوال بھی ان سے متاثر ہوئے بغیر نہ رہ سکے۔

بچوں میں مضبوط اعتماد دیکھ کر وزیر اعلی اروند کیجریوال نے اسٹیج سے ان کی تعریف کی اور انہیں مبارکباد دی اور کہا کہ وہ بڑے پرائیویٹ اسکولوں میں بھی جاتے ہیں۔ آج ہمارے بچوں نے جو ثقافتی پروگرام پیش کیا وہ کسی بھی بہترین پرائیویٹ اسکول کے بچوں کی کارکردگی سے کم نہیں تھا۔ تعلیم ہماری حکومت کا سب سے اہم ترجیحی شعبہ ہے۔ یہ ہمارے نظریے کا حصہ ہے کہ کوئی بھی ملک اچھی تعلیم کے بغیر ترقی نہیں کر سکتا۔ بدقسمتی سے گزشتہ 75 سالوں میں ہمارے ملک میں دو طرح کے نظام تعلیم کا آغاز ہوا۔ پرائیویٹ اسکول ان لوگوں کے لیے بنائے گئے جن کے پاس پیسہ ہے اور جن کے پاس پیسہ ہے وہ اپنے بچوں کو بھیجتے ہیں۔انہیں سرکاری اسکولوں میں بھیجنے پر مجبور کیا گیا۔وزیر اعلی اروند کیجریوال نے کہا کہ ایسا نہیں ہے کہ سرکاری اسکول ہمیشہ خراب تھے۔ اگر ہم آزادی کے بعد 20-25 سال کے سفر پر نظر ڈالیں تو اس وقت کے تمام آئی اے ایس، آئی پی ایس یا لیڈر سرکاری اسکولوں سے تعلیم حاصل کرتے تھے۔ آزادی کے بعد ملک میں چند ہی پرائیویٹ اسکول تھے۔ لیکن ان 75 سالوں میں ایسا کیا ہوا۔رفتہ رفتہ سرکاری اسکول خراب ہوتے گئے اور پرائیویٹ اسکول بڑھتے گئے۔ حالات ایسے بن گئے کہ جس کے پاس پیسہ تھا وہ پیسے بچا کر اپنے بچوں کو سرکاری اسکولوں کی بجائے پرائیویٹ اسکولوں میں بھیجنے لگے۔ اس کے ساتھ ساتھ سرکاری اسکول تیزی سے خراب ہوتے گئے۔ جب دہلی میں ہماری حکومت بنی تو پچھلی حکومتوں کو 10-10 سرکاری اسکول سی ایس آر کے تحت کمپنی کو دیے گئے تھے۔ اسکولوں کی زمینیں بھی کمرشل کر دی گئیں۔ اس وقت عجیب و غریب خیالات تھے۔ پورے ملک میں تعلیم کی نجکاری کا ماحول چل رہا تھا۔ جس کے پاس پیسہ ہے وہ تعلیم حاصل کرے گا اور جس کے پاس پیسہ نہیں وہ تعلیم حاصل نہیں کر سکے گا۔وزیر اعلی اروند کیجریوال نے کہا کہ اگر ملک میں ایسا ماحول ہو کہ صرف امیروں کو تعلیم ملے اور غریبوں کو تعلیم نہ ملے تو ملک کبھی ترقی نہیں کر سکتا۔ کیونکہ ہمارے ملک میں بہت سے غریب اور متوسط گھرانے رہتے ہیں۔ ان لوگوں کے پاس اپنے بچوں کو اتنی مہنگی تعلیم دینے کے پیسے کہاں سے آتے ہیں؟ معیاری تعلیم چاہیے تو پیسے چاہیے اور لوگوں کے پاس پیسے نہیں ہیں۔ ہم نے پچھلے 8 سالوں میں اس تاثر کو بدل دیا ہے۔ پچھلے آٹھ سالوں میں تعلیم کے میدان میں کافی تبدیلی آئی ہے۔ پہلے جب بچے سرکاری سکولوں میں جاتے تھے تو ان میں اعتماد کی کمی تھی لیکن اباعتماد کی کمی نہیں ہے۔ اکثر دیکھا گیا کہ اگر کسی گھر میں لڑکا اور لڑکی ہو تو لڑکے کو پرائیویٹ اور لڑکی کو سرکاری اسکول میں بھیج دیا جاتا تھا۔وزیر اعلی اروند کیجریوال نے کہا کہ سیاست میں آنے سے پہلے جب میں ایک این جی او میں کام کرتا تھا تو اکثر دیکھا جاتا تھا کہ سرکاری اسکولوں میں تعلیم نہیں دی جاتی تھی اور والدین ایک دو سال بعد بچوں کو اسکول سے نکال کر کام میں لگا دیتے تھے۔ یہی وجہ ہے کہ اس وقت دہلی میں اسکول چھوڑنے والے بچوں کی شرح زیادہ تھی، لیکن ابی یہ سب رک گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ دہلی کے سرکاری اسکولوں میں تقریباً 18 لاکھ بچے پڑھتے ہیں۔ جب ہم بچوں اور ان کے والدین کے ساتھ بات چیت کرتے ہیں تو ہمیں معلوم ہوتا ہے کہ اب سرکاری اسکولوں کے بچے پرائیویٹ اسکولوں کے بچوں کے مقابلے میں زیادہ خود اعتمادی کا مظاہرہ کرتے ہیں۔ سرکاری اسکولوں کے بچیزیادہ اعتماد کے ساتھ بات کرتے ہیں، یہ سب سے اہم ہے۔

Related posts

بدعنوان اور ظالم افراد کیخلاف لڑائی میرا اصل ہدف ہو گا

Paigam Madre Watan

मीर सादिक और मीर जाफ़र द्वारा हैदराबाद की मुस्लिम मददगार चार मीनार को ऑपरेटिव बैंक का विनाश

Paigam Madre Watan

مرکزی جمعیت اہل حدیث ہند کی مجلس عاملہ کا اہم اجلاس اختتام پذیر

Paigam Madre Watan

Leave a Comment

türkiye nin en iyi reklam ajansları türkiye nin en iyi ajansları istanbul un en iyi reklam ajansları türkiye nin en ünlü reklam ajansları türkiyenin en büyük reklam ajansları istanbul daki reklam ajansları türkiye nin en büyük reklam ajansları türkiye reklam ajansları en büyük ajanslar