Articles مضامین

پیارے نبی حضرت محمد ﷺ کا ولیمہ

مفتی ندیم احمد انصاری


نکاح انتہائی مسرت اور خوشی کا موقع ہوتا ہے۔ اسلام نے یہ تعلیم دی ہے کہ مسلمان اپنی اس خوشی میں اعزہ و اقربا کو شریک کرے۔ مسنون ولیمہ یعنی نکاح کے بعد احباب کے لیے کھانے پینے کا انتظام کرنا ثواب کا باعث ہے لیکن شریعت میں کسی بھی موقع پر دکھاوے اور اتراہٹ کو پسند نہیں کیا گیا۔ آج کل لوگوں نے نکاح و ولیمے کو انا کا مسئلہ بنا لیا ہےاور اس میں اسراف، ریا اور نام و نمود جیسی گندگیاںشامل کر لی گئی ہیں۔ ایک ایک ولیمے میں اتنا خرچ کر دیا جاتا ہے کہ کئی لوگ فریضیۂ حج ادا کر سکتے ہیں۔حضرت نبی کریم ﷺ نے از خود ولیمہ کر کے دکھایا ہے۔ آپ ﷺنے نکاح کے بعد ولیمے میں دعوت کا اہتمام فرمایا اور اعتدال کی راہ دکھائی۔ ہمارا ایمان ہے کہ اگر آپ ﷺ چاہتے تو آپ کے ولیمے میں آسمان سے فرشتے صف باندھے نازل اترتے، آپ چاہتے تو منّ و سلویٰ سے بہتر خوان جنت سے اتر جاتا، لیکن آپ ﷺ نے اپنی امت کا خیال رکھا اور ہمیں ولیمے کا وہ سادہ طریقہ سکھایاجس پر بہ آسانی عمل کیا جا سکتا ہے۔آج لوگ مسنون ولیمے کے نام پر کس کس طرح حدود سے تجاوز کررہے ہیں، وہ کسی سے ڈھکا چھپا نہیں۔
دو مُد جَو سے ولیمہ
حضرت صفیہ بنت شیبہؓسے روایت ہے، حضرت نبی کریم ﷺ نے اپنی بعض بیویوں کا ولیمہ دو مد جَوسے کیا۔(بخاری)بخاری شریف کے حاشیے میں ہے کہ یہ ام المومنین حضرت امِ سلمہؓکا ولیمہ تھا۔ انسان کے حالات ہر وقت ایک جیسے نہیں رہتے، جیسا موقع ہو اس حساب سے ولیمے کے انتظام میں کمی بیشی کی جا سکتی ہے۔
حضرت صفیہؓسے نکاح اور ولیمہ
ام المومنین حضرت صفیہؓحُی بن اَخطب کی بیٹی تھیں، وہ خیبر میں آباد قبیلۂ بنوقریظہ و بنو نضیر کے سردار تھے، جب خیبر کے یہودیوں سے مسلمانوں کی جنگ ہوئی اور اللہ تعالیٰ نے اس میں مسلمانوں کو فتح دی تو صفیہ قید ہو کر آپ ﷺ کی ملکیت میں آئیں، آپ نے ان کو آزاد کر دیا اور اپنی زوجیت میں لے لیا۔حضرت انسؓسے روایت ہے، رسول اللہ ﷺ نے حضرت صفیہؓکو آزاد کیا، پھر ان سے نکاح کرلیا اور ان کا آزاد کرنا ہی مہر قرار پایا، پھر آپ ﷺنے ان کا ولیمہ ملیدے سے کیا۔(بخاری)
ولیمے میں روٹی تھی نہ بوٹی
حضرت انسؓسے روایت ہے، حضرت نبی کریم ﷺ مدینے اور خیبر کے راستے میں تین دن فروکش رہے، یہاں آپ ﷺ نے حضرت صفیہؓسے خلوت فرمائی۔ میں نے آپ ﷺ کے ولیمے میں مسلمانوں کو بلایا، اس ولیمے میں نہ روٹی تھی نہ گوشت۔ آپ ﷺ نے حضرت بلالؓکو دسترخوان بچھانے کا حکم دیا، جب دسترخوان بچھا دیا گیا تو آپﷺ نے اس پر چھوہارے،پنیر اور گھی ڈال دیا۔ مسلمان آپس میں کہنے لگے: صفیہؓامہات المومنین میں سے ہیں یا آپ ﷺ کی کنیز ہیں ؟ لوگوں نے کہا : اگر آپ ﷺ ان کا پردہ کرائیں گے تو امہات المومنین میں سے ہیں ورنہ کنیز۔ جب آپ ﷺ نے کوچ کیا تو ان کے لیے اپنے پیچھے بیٹھنے کی جگہ بنائی اور پردہ کھینچ دیا (جس سے معلوم ہوا کہ وہ امہات المومنین میں سے ہیں)۔(بخاری)
دسترخوان نبی کا، کھانا صحابہ کا
حضرت نبی کریم ﷺ صحابۂ کرامؓکے ساتھ چوںکہ سفر میں تھے اس لیے جو کچھ آپ کے پاس تھاوہ دسترخوان پر ڈال دیا گیا اور صحابہ کو بھی فرمایا کہ جس کے پاس جو ہو وہ لے آئے۔مفصل حدیث اس طرح ہے:حضرت انسؓسے روایت ہے، رسول اللہﷺ  نے خیبر کا رخ کیا تو ہم نے نمازِ فجر خیبر کے نزدیک اندھیرے میں ادا کی، پھر نبی ﷺ اور حضرت ابوطلحہؓسوار ہوئے، میں حضرت ابوطلحہؓ کے پیچھے سوار تھا۔ حضرت نبی کریم ﷺ نے اپنی سواری کا رخ خیبر کی گلیوں کی طرف کردیا۔ میرا گھٹنا آپ ﷺ کی ران سے چھو جاتا تھا۔ پھر آپ ﷺ نے اپنی ران سے تہبند ہٹایا، یہاں تک کہ میں نے آپ ﷺ کی شفاف اور سفید ران کی سفیدی اور چمک دیکھ لی۔ جب آپﷺ خیبر کی بستی میں داخل ہوئے تو آپ نے فرمایا:الله اکبر، خیبر برباد ہوگیا! جب ہم کسی قوم کے آنگن میں پڑاؤ کرتے ہیں تو ان کی صبح بڑی ہول ناک ہوتی ہے جو قبل ازیں متنبہ کیے گئے ہوں! آپ نے یہ تین مرتبہ فرمایا۔ حضرت انسؓکہتے ہیں: خیبر کے یہودی اپنے کاموں کے لیے باہر نکلے ہی تھے کہ وہ چلا اٹھے : محمد (ﷺ) آ پہنچے۔ عبدالعزیز راوی نے کہا: حضرت انسؓسے بعض روایت کرنے والے ہمارے ساتھیوں نے والخميس‏کا لفظ بھی نقل کیا ہے یعنی وہ چلا اٹھے کہ محمد(ﷺ) لشکر لے کر پہنچ گئے۔ پس ہم نے خیبر بہ زور فتح کرلیا اور قیدی جمع کیے گئے۔ پھر دحیہؓآئے اور عرض کیا: اے اللہ کے رسول ! مجھے قیدیوں میں سے کوئی باندی عنایت کیجیے۔ آپ ﷺ نے فرمایا: جاؤ کوئی باندی لے لو۔ انھوں نے صفیہ بنت حیی کو لے لیا۔ پھر ایک شخص آپ ﷺ کی خدمت میں حاضر ہوا اور عرض کیا: اے اللہ کے رسول ! صفیہ جو قریظہ اور نضیر کے سردار کی بیٹی ہیں، انھیں آپ نے دحیہ کو دے دیا، وہ تو صرف آپ ہی کے لیے مناسب تھیں! آپ ﷺ نے فرمایا: دحیہ کو مع صفیہ کے بلا لاؤ۔ وہ لائے گئے۔ آپ ﷺ نے انھیں دیکھا تو فرمایا: قیدیوں میں سے کوئی اور باندی لے لو۔ راوی نے کہا: پھر آپ  نے صفیہ کو آزاد کردیا اور اپنے نکاح میں لے لیا۔ ثابت بنانی نے حضرت انسؓسے پوچھا: ابوحمزہ !آپ ﷺنے ان کا مہر نے کیا رکھا؟ حضرت انسؓنے فرمایا: ان کی آزادی ہی ان کا مہر تھا اور اسی پر آپ نے نکاح کیا۔ پھر راستے ہی میں حضرت ام سلیمؓ(حضرت انسؓکی والدہ) نے انھیں دلھن بنایا اور آپ ﷺ کے پاس رات کے وقت بھیجا۔ اب آپﷺ دلھا تھے، اس لیے آپ ﷺ نے فرمایا: جس کے پاس جو کچھ ہو وہ لے آئے۔ آپ نے چمڑے کا ایک دستر خوان بچھایا۔ بعض صحابہ کھجور لائے، بعض گھی۔ عبدالعزیز نے کہا : میرا خیال ہے کہ انسؓنے ستو کا بھی ذکر کیا۔ پھر لوگوں نے ان کا حلوہ بنا لیا۔ یہ رسول اللہ ﷺ کا ولیمہ تھا۔(بخاری)
حضرت زینبؓسے نکاح اور ولیمہ
حضرت انس بن مالکؓنے کہا؛ میں پردے کی آیت سے اچھی طرح واقف ہوں۔ رسول اللہ ﷺ نے جب حضرت زینبؓسے نکاح کیا اور وہ آپ کے گھر میں آئیں تو آپ نے ولیمہ کیا اور لوگوں کو دعوت دی۔ لوگ آئے اور کھانا کھانے کے بعد باتیں کرنے بیٹھ گئے۔ رسول اللہ ﷺ اندر گئے، پھر باہر آگئے تاکہ لوگ چلے جائیں، مگر وہ بیٹھے ہی رہے۔اس وقت اللہ تعالیٰ نے آیتِ حجاب نازل فرمائی۔آپ ﷺ اندر تشریف لے گئے اور میں نے بھی جانے کا قصد کیا مگر آپ نے پردہ ڈال دیا اور لوگ اٹھ کر چلے گئے۔(بخاری)
آیتِ حجاب کا ترجمہ یہ ہے:اے ایمان والو ! نبی کے گھروں میں (بلا اجازت) داخل نہ ہو، اِلّا یہ کہ تمھیں کھانے پر آنے کی اجازت دے دی جائے، وہ بھی اس طرح کہ تم اس کھانے کی تیاری کے انتظار میں نہ بیٹھے رہو، لیکن جب تمھیں دعوت دی جائے تو جاؤ، پھر جب کھانا کھا چکو تو اپنی اپنی راہ لو، اور باتوں میں جی لگا کر نہ بیٹھو۔ حقیقت یہ ہے کہ اس بات سے نبی کو تکلیف پہنچتی ہے اور وہ تم سے ( کہتے ہوئے) شرماتے ہیں، اور اللہ حق بات میں کسی سے نہیں شرماتا۔ اور جب تمھیں نبی کی بیویوں سے کچھ مانگنا ہو تو پردے کے پیچھے سے مانگو۔ یہ طریقہ تمھارے دلوں کو بھی اور ان کے دلوں کو بھی زیادہ پاکیزہ رکھنے کا ذریعہ ہوگا۔ اور تمھارے لیے جائز نہیں ہے کہ تم اللہ کے رسول کو تکلیف پہنچاؤ، اور نہ یہ جائز ہے کہ ان کے بعد ان کی بیویوں سے کبھی بھی نکاح کرو، یہ اللہ کے نزدیک بڑی سنگین بات ہے۔ (الأحزاب)
سب سے بڑا ولیمہ
ام المومنین حضرت زینبؓکے ولیمے میں آپ ﷺ نے ایک بکری ذبح کی تھی جس میں دعائے نبوی سے برکت ہوئی تھی اور تین سو آدمیوں نے شکم سیر ہو کر کھایا تھا، اتنا بڑا ولیمہ آپ نے کسی بیوی کا نہیں کیا تھا۔(تحفۃ القاری)حضرت انس بن مالکؓکے سامنے حضرت زینب بنت جحشؓکے نکاح کا ذکر آیا تو انھوں نے فرمایا: میں نے نہیں دیکھا کہ رسول اللہ ﷺ نے اپنی ازواج میں سے کسی کا ایسا ولیمہ کیا ہو جیسا حضرت زینبؓسے نکاح کے بعد کیا تھا۔ آپ ﷺنے ایک بکری سے ولیمہ کیا تھا۔(ابوداود)
حضرت انس بن مالکؓسے روایت ہے، رسول اللہ ﷺ نے اپنی ازواجِ مطہرات سے نکاح پر زینبؓکے نکاح سے زیادہ اور افضل ولیمہ نہیں کیا۔ ثابت البنانی نے کہا: آپ ﷺ نے کس چیز کے ساتھ ولیمہ کیا تھا؟ انھوں نے کہا: آپ ﷺ نے صحابۂ کرامؓکو گوشت اور روٹی کھلائی، یہاں تک کہ انھوں نے (سیرہو کر) چھوڑ دیا ۔(مسلم)

Related posts

امام اعظم رحمہ اللہ کا ایک سوال کا سبق آموزجواب

Paigam Madre Watan

قرآن کاوہ حسین قصہ جس میںنصیحت بھی ہے اور ہدایت بھی

Paigam Madre Watan

والدِ گرامی شیخ_عزیزالرحمٰن_سلفی حفظہ اللہ کی ایک اور شاہکار تصنیف

Paigam Madre Watan

Leave a Comment

türkiye nin en iyi reklam ajansları türkiye nin en iyi ajansları istanbul un en iyi reklam ajansları türkiye nin en ünlü reklam ajansları türkiyenin en büyük reklam ajansları istanbul daki reklam ajansları türkiye nin en büyük reklam ajansları türkiye reklam ajansları en büyük ajanslar