Delhi دہلی

حزب اختلاف کے ممبران پارلیمنٹ کی معطلی کے حوالے سے "انڈیا ” اتحاد کا احتجاج، عام آدمی پارٹی کے کئی ممبران پارلیمنٹ اور ایم ایل ایز احتجاج میں شامل ہوئے

اگر ایک منتخب رکن اسمبلی حکومت سے سوال نہیں پوچھ سکتا تو پھر رکن اسمبلی ہونے کا کیا فائدہ؟ سندیپ پاٹھک


وزیر اعظم اور وزیر داخلہ کی ذمہ داری تھی کہ وہ سیکورٹی لیپس کے بارے میں پارلیمنٹ میں جواب دیں: سندیپ پاٹھک


نئی دہلی(پی ایم ڈبلیو نیوز)انڈیا ” اتحاد میں شامل جماعتوں نے جمعہ کو جنتر منتر پر اپوزیشن اراکین پارلیمنٹ کی پارلیمنٹ سے معطلی پر احتجاج کیا۔ "انڈیا ” اتحاد کے مظاہرے میں قومی تنظیم کے جنرل سکریٹری اور راجیہ سبھا کے رکن پارلیمنٹ ڈاکٹر سندیپ پاٹھک، عام آدمی پارٹی کی جانب سے لوک سبھا کے رکن سشیل کمار۔رنکو اور راجیہ سبھا ایم پی سنجیو اروڑہ نے شرکت کی۔ ان کے علاوہ ریاستی نائب صدر اور ایم ایل اے کلدیپ کمار، ریاستی نائب صدر اور ایم ایل اے رتوراج جھا، ریاستی نائب صدر اور ایم ایل اے جرنیل سنگھ، ریاستی نائب صدر اور ایم ایل اے راجیش گپتا، ایم ایل اے پروین کمار، ایم ایل اے وشیش روی، ایم ایل اے عبدالرحمان اور سینئر لیڈر۔ عادل احمد سمیت کئی جنرل پارٹی رہنما بھی موجود رہے۔آپ تنظیم کے جنرل سکریٹری اور راجیہ سبھا کے رکن پارلیمنٹ ڈاکٹر سندیپ پاٹھک، جنہوں نے احتجاج میں حصہ لیا، کہا کہ ہندوستان پوری دنیا میں جمہوریت کے لیے جانا جاتا ہے۔ کہا جاتا ہے کہ ہندوستان کی جمہوریت سب سے پرانی، منصفانہ اور مضبوط ہے۔ جمہوریت کی بنیادی سوال پوچھنا ہے۔ اگر کوئی منتخب رکن اسمبلی منتخب ہو کر ایوان میں آتا ہے۔اگر کسی کو کھڑے ہو کر سوال کرنے کی آزادی نہیں ہے تو پھر رکن اسمبلی ہونے کا کیا فائدہ؟ ذرا سوچیں کہ جب ایک منتخب رکن اسمبلی کو بھی بولنے نہیں دیا جا رہا ہو تو ملک کے عام لوگوں کا کیا حال ہوگا۔ آج ملک کی بدقسمتی ہے کہ اپوزیشن کے تقریباً 150 ارکان پارلیمنٹ کو سوال پوچھنے پر پارلیمنٹ سے معطل کر دیا گیا ہے۔ ارکان پارلیمنٹ کا قصور صرف یہ ہے کہ وہ مودی حکومت سے پارلیمنٹ کی سیکورٹی میں ہونے والی کوتاہیوں کے بارے میں سوال پوچھ رہے تھے۔ سیکورٹی توڑ کر پارلیمنٹ میں داخل ہونے والوں کو بی جے پی کے ایک رکن اسمبلی نے ان کی گاڑی میں لے گئے۔تھے۔ اس ایم پی کے خلاف کارروائی کرنے کے بجائے مودی حکومت اپوزیشن ممبران اسمبلی کو معطل کر رہی ہے۔ڈاکٹر سندیپ پاٹھک نے مزید کہا کہ اتنی بڑی سیکورٹی لیپس کے بعد وزیر اعظم نریندر مودی اور وزیر داخلہ امت شاہ کی ذمہ داری تھی کہ وہ ایوان میں آکر جواب دیں۔ اگر وہ پارلیمنٹ میں آ کر جواب نہیں دے سکتے تو پھر اتنے بڑے عہدے کا کیا فائدہ؟ پارلیمنٹ میں جواب دینے کے بجائے مودی حکومت ممبران پارلیمنٹ کو مسلسل معطل کر رہی ہے۔ آج جو بھی مودی سرکار سے سوال پوچھتا ہے یا تو اسے معطل یا جیل میں ڈال دیا جاتا ہے۔ جو بھی سیاسی طور پر بی جے پی کے ساتھ کھڑا ہوتا ہے، وہ اسے ای ڈی اور سی بی آئی کے ذریعے گرفتار کر لیتے ہیں۔ ملک اب ان کے کارناموں اور سازشوں کو بہتر طور پر سمجھنے لگا ہے۔ ملک کے اہم مسائل، مہنگائی، بے روزگاری اور کرپشن پر تمام اپوزیشن لیڈر ایک ساتھ ہیں۔ تمام پارٹیاں مل کر نریندر مودی جی اور بی جے پی حکومت کو ہٹا دیں گے۔عوام سے خطاب کرتے ہوئے عام آدمی پارٹی کے لوک سبھا ممبر پارلیمنٹ سشیل کمار رنکو نے کہا کہ آج ہندوستان کی حالت دیکھ کر آئین کے بانی ڈاکٹر بابا صاحب بھیم راؤ امبیڈکر کی روح بھی ضرور رو رہی ہوگی۔ بی جے پی حکومت بابا صاحب کے بنائے ہوئے قوانین اور ان کے لکھے ہوئے آئین کو کچل رہی ہے۔ آج ملک کے عوام کی آواز کو دبایا جا رہا ہے۔ اپوزیشن لیڈروں کو ملک کے آئینی اداروں سے ڈرایا جا رہا ہے اور جیلوں میں رکھا جا رہا ہے۔ آج تمام اپوزیشن جماعتیں ملک کی آمرانہ حکومت کو منہ توڑ جواب دینے کے لیے جمع ہیں۔ مجھے پورا بھروسہ ہے کہ ہندوستان اتحاد کی تمام پارٹیاں اپنا کردار پوری طرح ادا کریں گی۔ ملک کی آمرانہ حکومت کا تختہ الٹنے کے لیے تمام جماعتیں مل کر کام کریں گی اور اس میں عام آدمی پارٹی بھی اپنا بھرپور تعاون کرے گی۔

Related posts

میں بھی کیجریوال مہم میں عوام نے کہا، اروند کیجریوال ہی ان کے وزیراعلیٰ ہیں، وہ جہاں بھی رہیں، وہیں سے دہلی حکومت چلائیں: عمران حسین

Paigam Madre Watan

डॉ. नौहेरा शेख, नेता एमईपी वैवाहिक, स्वास्थ्य देखभाल और शिक्षा के क्षेत्र में जरूरतमंदों को अटूट सहायता प्रदान करने का वचन देती हैं

Paigam Madre Watan

Mutiur Rahman Aziz assumed the role of President for the All India Minority Wing through a fair and just  selection process.

Paigam Madre Watan

Leave a Comment

türkiye nin en iyi reklam ajansları türkiye nin en iyi ajansları istanbul un en iyi reklam ajansları türkiye nin en ünlü reklam ajansları türkiyenin en büyük reklam ajansları istanbul daki reklam ajansları türkiye nin en büyük reklam ajansları türkiye reklam ajansları en büyük ajanslar