Blog

ہریانہ میں’ بدلاؤ جن سبھا’ کر بولے ا روند کیجریوال آپ کی حکومت بنادو، میں بجلی 24 گھنٹے اور مفت کر دوں گا

عام آدمی پارٹی ہریانہ اسمبلی کی 90 سیٹوں پر تنہا الیکشن لڑے گی اور مکمل اکثریت کے ساتھ حکومت بنائے گی: اروند کیجریوال


اگر ہریانہ کے لوگ دہلی اور پنجاب کی طرح ترقی چاہتے ہیں تو انہیں بھی اب جھاڑو اٹھانا چاہئے: بھگونت مان


نئی دہلی؍ہریانہ، عام آدمی پارٹی کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے اتوار کو ہریانہ کے جند میں ‘ بدلاؤ جن سبھا’ سے خطاب کیا اور ریاست میں اقتدار کی تبدیلی کے لیے لوگوں سے اپیل کی۔ انہوں نے کہا کہ عام آدمی پارٹی حکومت بنائے، دہلی اور پنجاب کی طرح ہریانہ میں بھی 24 گھنٹے بجلی یقینی بناؤں گا۔میں اسے مفت میں کروں گا۔ اس دوران دہلی-پنجاب میں عوام کو موصول ہونے والے صفر بجلی بل کی کاپی دکھاتے ہوئے انہوں نے کہا کہ AAP کے علاوہ کسی بھی پارٹی کی حکومت 24 گھنٹے مفت بجلی نہیں دے سکتی۔ انہوں نے کہا کہ کھٹر صاحب نوکری مانگنے پر ہمارے نوجوانوں کو مرنے کے لیے اسرائیل بھیج رہے ہیں۔ اگر آپ نوکری نہیں دے سکتے تو کرسی چھوڑ دو۔ جس طرح ہم نے صرف دو سالوں میں پنجاب میں 42 ہزار سرکاری نوکریاں دی ہیں، ہریانہ میں بھی دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ہم اسکولوں اور اسپتالوں کی مرمت، غریبوں کو مفت بجلی فراہم کرنا اور کرپشن کا خاتمہ چاہتے ہیں۔ اس لیے یہ لوگ مجھے جیل بھیجنا چاہتے ہیں۔ وہ تمام ایجنسیاں میرے پیچھے ہیں۔ ایسا لگتا ہے جیسے میں دہشت گرد ہوں جبکہ یہ وہی دہشت گرد ہیں جنہوں نے ہر گھر میں مہنگائی کی دہشت پھیلا رکھی ہے۔ اس دوران پنجاب کے وزیراعلی بھگونت مان نے بھی جلسہ عام سے خطاب کیا۔ہریانہ کے جند میں تبدیلی کے لیے جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے AAP کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ ہریانہ میں سب سے بڑی تنظیم عام آدمی پارٹی ہے۔ یہاں تک کہ بی جے پی، کانگریس اور جے جے پی کے پاس بھی اے اے پی جتنی بڑی تنظیم نہیں ہے۔ ہر وارڈ میں 15-20 افراد کی کمیٹی بنائی گئی ہے۔ صرف چھ ماہ کے اندر ہریانہ بھر میں 1.25 لاکھ سے زیادہ عام آدمی پارٹی کے عہدیدار بن چکے ہیں۔ ہریانہ کے اندر کے لوگ تمام پارٹیوں سے بہت ناخوش ہیں۔ ہریانہ کے عوام نے 75 سالوں میں تمام پارٹیاں دیکھی ہیں، سبھی پارٹیوں نے سوائے گھر بھرنے کے کچھ نہیں کیا۔ ان کی سات پشتے گھر بیٹھ کر کھائیں گی۔ اس لیے آج لوگوں کو صرف عام آدمی پارٹی پر بھروسہ ہے۔ ہریانہ کے ایک طرف پنجاب اور دوسری طرف دہلی ہے۔ ہریانہ کے لوگ جب پنجاب اور دہلی جاتے ہیں تو وہاں کے لوگ بہت خوش ہوتے ہیں۔ اس لیے اب پورا ہریانہ ایک بڑی تبدیلی کا مطالبہ کر رہا ہے۔آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ پہلے دہلی میں صرف کانگریس اور بی جے پی تھی۔ دہلی کے عوام نے دونوں پارٹیوں کو کلین سویپ کیا اور عام آدمی پارٹی بھاری اکثریت سے جیت گئی۔ دہلی کے بعد پنجاب کے لوگوں نے بھی آپ کو بھاری اکثریت دے کر جیتا دیا۔ نتیجہ یہ ہے کہ آج پنجاب اور دہلی کے لوگ خوش ہیں۔ ہم پنجاب اور دہلی کے ایک لاکھ لوگوں کے لیے بجلی کے صفر بل لائے ہیں، یہ وہاں کے لوگوں کی خوشی کا سب سے بڑا ثبوت ہے۔ دہلی اور پنجاب میں بجلی مفت ہے اور لوگوں کو بجلی کا بل صفر ہے۔ ہریانہ کے لوگوں کو صفر بجلی کے بل دکھاتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ان تمام لوگوں کو بجلی کے بل صفر بل آئے ہیں۔اگر پنجاب اور دہلی کے لوگوں کو بجلی کا بل صفر آتا ہے تو ہریانہ کے لوگوں نے کیا غلطی کی ہے کہ انہیں صفر بل نہیں آتا؟ ہریانہ کے لوگ بھی اپنے بجلی کے بل کو صفر تک کم کر سکتے ہیں۔ کانگریس، بی جے پی یا جے جے پی ہریانہ میں 24 گھنٹے بجلی اور صفر بل نہیں کر سکتی، یہ کام صرف عام آدمی پارٹی کر سکتی ہے۔ یہ لوگ کہتے تھے۔بجلی کا بل صفر کر دیں تو بجلی نہیں آئے گی۔ پہلے دہلی اور پنجاب میں 7-8 گھنٹے بجلی کی کٹوتی ہوتی تھی، آج دہلی-پنجاب میں 24 گھنٹے بجلی ہے۔ میں انجینئر ہوں، پڑھا لکھا ہوں، ذہین ہوں، میری ڈگری بھی اصلی ہے، جعلی نہیں۔ میں جانتا ہوں کہ یہ کیسے کرنا ہے۔ 24 گھنٹے بجلی دوں گا اور بجلی کا بل صفر ہو گا۔میں یہ کروں گا. اس لیے اس بار پڑھے لکھے کو ووٹ دیں۔آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ پنجاب میں انتخابات کے دوران بہت سے لڑکے ہمارے پاس روزگار کے لیے آتے تھے۔ وہ پانی کی ٹینک پر چڑھ کر ایک سال سے دھرنا دے رہے تھے۔ پنجاب میں ہماری حکومت بنے ابھی دو سال ہی ہوئے ہیں اور ان دو سالوں میں بھگونت مان نے 42 ہزار نوجوانوں کو سرکاری نوکریاں دی ہیں۔ ہماری حکومت نے نوجوانوں کو اسرائیل جانے کے لیے نہیں کہا، لیکن ہریانہ کے وزیر اعلی کھٹر صاحب نوجوانوں کو مزدور کے طور پر کام کرنے کے لیے اسرائیل بھیج رہے ہیں۔ اسرائیل میں جنگ جاری ہے اوپر سے بم گر رہے ہیں۔ کھٹر صاحب ہمارے بچوں کو مرنے کے لیے اسرائیل بھیج رہے ہیں۔ نوکری نہیں دے سکتے تو کرسی چھوڑ دو۔ہم نوکریاں دے کر دکھائیں گے کہ ہم نوکریاں دینا جانتے ہیں۔ لیکن ہمارے بچوں کو مرنے کے لیے اسرائیل نہ بھیجنا۔ جن ممالک کے لوگ اسرائیل میں رہ رہے ہیں وہ اپنے لوگوں کو وہاں سے نکال رہے ہیں۔ تاکہ ان کے لوگ وہاں نہ مریں، کھٹر صاحب اپنے لوگوں کو مرنے کے لیے اسرائیل بھیج رہے ہیں۔ کرسی کھٹر صاحب چھوڑ دیں اور کرسی ایسے لوگوں کو دی جائے جو نوکریاں دے سکیں۔ میری ہریانہ کے لوگوں سے اپیل ہے کہ جو لوگ نوکریاں نہیں دے سکتے انہیں اقتدار سے ہٹائیں اور جو نوکریاں دے سکتے ہیں انہیں اقتدار میں لائیں ۔آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ بی جے پی کو سب سے بڑا خطرہ عام آدمی پارٹی سے ہے۔ اس لیے یہ لوگ میرے اور عام آدمی پارٹی کے پیچھے ہیں۔ ہمارا قصور صرف یہ ہے کہ ہم اس ملک کے نظام تعلیم اور صحت کو بہتر بنانا چاہتے ہیں۔ اس لیے وہ ہمیں جیل میں ڈالنا چاہتے ہیں۔ ہم غریبوں میں سیمفت علاج چاہتے ہیں، 24 گھنٹے مزید مفت بجلی فراہم کرنا چاہتے ہیں، کرپشن کا خاتمہ چاہتے ہیں۔ اس لیے یہ لوگ ہمارے پیچھے ہیں۔ آج اگر ہم بھی ان کی طرح پیسے کھانے لگیں اور انہیں کچھ پیسے بھیج دیں تو وہ کہیں گے کہ کیجریوال بہت اچھے ہیں اور ہماری حکومت قائم رہے گی۔ جب سے میں سیاست میں آیا ہوں، وہ ہمارے پیچھے ہیں۔ آج انہوں نے عام آدمی پارٹی کے بیشتر لیڈروں کو جیل میں ڈال دیا ہے۔ دہلی میں 2015 میں ہماری حکومت بنی اور ہم نے اسکولوں، اسپتالوں، سڑکوں، بجلی اور پانی کی مرمت کی۔ وہ یہ سب کرنے کا ارادہ نہیں رکھتے کیونکہ وہ کام نہیں کرتے۔ دہلی میں ہمارے کاموں کا پورے ملک میں چرچا ہے۔جب یہ ہونے لگا تو انہوں نے کیجریوال کا کام روکنے کا فیصلہ کیا۔ یہ لوگ 2015 میں میرے کام کو روکنے کے لیے قانون لائے، لیکن میں پڑھا لکھا ہوں۔ اگر وہ میرا ایک کام روک دیں تو میں دوسرا کام شروع کر دیتا ہوں۔ اس کے بعد یہ لوگ میرے کام کو روکنے اور میرا اقتدار چھیننے کے لیے یکے بعد دیگرے کئی قانون لائے لیکن پھراگر میں نہ روکا تو اب وہ کہہ رہے ہیں کہ کیجریوال کو جیل میں ڈال دو۔یہ لوگ عام آدمی پارٹی کے تمام لیڈروں کو جیل میں ڈالنا چاہتے ہیں، لیکن میں جیل جانے سے نہیں ڈرتا: اروند کیجریوال انہوں نے کہا کہ انہوں نے منیش سسودیا کو جیل میں ڈال دیا۔ منیش سسودیا کا قصور یہ ہے کہ انہوں نے غریبوں کے بچوں کو اچھی تعلیم دینے کی ہمت کی۔ پچھلے 75 سالوں سے اس ملک کے غریبوں کے بچوں کو اچھی تعلیم نہیں مل رہی تھی۔ غریب غریب ہی رہا اور امیر امیر تر ہوتا گیا۔ منیش سسودیا اس میں غریبوں کے بچوں کو اچھی تعلیم دینے کا حوصلہ ہے۔ ستیندر جین کو اس لیے بھی جیل میں ڈال دیا گیا کہ وہ امیر ہو یا غریب، ہر ایک کے ساتھ اچھا سلوک کرنے کی ہمت رکھتے تھے۔ آج دہلی کے سرکاری اسپتال پانچ ستاروں کی طرح ہیں۔ ملک بھر سے لوگ اپنا علاج کرانے آرہے ہیں۔تمام علاج مفت ہے۔ یہ لوگ ایک ایک کرکے عام آدمی پارٹی کے تمام لیڈروں کو جیل میں ڈالنا چاہتے ہیں، لیکن میں جیل جانے سے نہیں ڈرتا۔ میں ہریانہ کا بیٹا ہوں، میرے اندر ہریانہ کا خون ہے، میں جیل سے نہیں ڈرتا۔ ہریانہ کے لوگوں کو جیل سے ڈرانے کی کوشش نہ کریں۔ یہ لوگ کیجریوال کو ختم کرنا چاہتے ہیں۔ اروند کیجریوال نے کہا کہ یہ لوگ مجھے نشانہ بنا رہے ہیں، اس لیے میں اعلان کرنا چاہتا ہوں۔ لیکن میرے پانچ مطالبات ہیں، جو اس ملک کے 140 کروڑ عوام کے مطالبات ہیں۔ یہ پانچ مطالبات پورے کردو، میں سیاست چھوڑ دوں گا۔ میں اقتدار اور پیسے کے لیے سیاست میں نہیں آیا، میں وزیر، وزیراعلیٰ بننے نہیں آیا۔
ملک کے عوام کی طرف سے میرے یہ پانچ مطالبات ہیں۔1- سب کے لیے یکساں نظام تعلیمآپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ اس ملک کے تعلیمی نظام کو ٹھیک کردو، سب کے لیے یکساں تعلیم کا انتظام کردو۔ امیر ہو یا غریب، سب کو اچھی تعلیم حاصل کرنی چاہیے۔ پورے ملک میں یکساں نظام تعلیم کا بندوبست کردیں، کیجریوال سیاست چھوڑ دیں گے۔2- سرکاری اسپتالوں کو بہتر بنا کر مفت اور اچھا علاج کردو پورے ملک میں ہر ایک کے لیے اچھے علاج کا انتظام کردیں۔ چاہے امیر ہو یا غریب، ملک میں ہر ایک کا علاج ہونا چاہئے اور ہر ایک کو مفت علاج ملنا چاہئے، جیسا کہ ہم نے دہلی میں دکھایا ہے۔ دہلی میں سب کا اچھا اور مفت علاج ہوتا ہے۔ ملک بھر کے ہر گاؤں میں محلہ کلینک کھول دیں، تمام حکومت اسپتالوں کو عظیم بنائیں۔ ہم نے دہلی میں سرکاری اسپتالوں کو بہترین بنایا اور اب پنجاب میں بھی بنا رہے ہیں۔ ملک کے تمام اسپتال ٹھیک کردیں اور مفت علاج کردیں، کیجریوال سیاست چھوڑ دیں گے۔3- پورے ملک میں مہنگائی کو کم کرنا ہے آج ملک میں اس قدر مہنگائی ہے کہ لوگوں کو اپنا گھر چلانا مشکل ہو رہا ہے۔ کئی خاندان ایسے ہیں جو ماہانہ صرف 6 سے 10 ہزار روپے کماتے ہیں۔ ان کا بجلی کا بل 3000 روپے آتا ہے، 2000 روپے بچوں کی پڑھائی پر اور 2000 روپے گیس سلنڈر پر خرچ ہوتے ہیں۔ اس کے بعد ان کے پاس کوئی پیسہ نہیں بچا۔وہ خاندان روٹی کیسے کھائے گا؟ پورے ملک میں مہنگائی کو کم کریں۔ مہنگائی کم ہو سکتی ہے۔ ہم نے دہلی اور پنجاب میں مہنگائی کو کم کیا ہے۔ بہت سے لوگوں کو یہ غلط فہمی ہے کہ مہنگائی خود بخود ہو رہی ہے۔ مہنگائی خود سے نہیں ہو رہی۔ اس ملک کے اندر بڑی سازش ہو رہی ہیں۔
4- ہر نوجوان کو روزگار میرا چوتھا مطالبہ ہے کہ پورے ملک کے ہر نوجوان کو روزگار دیا جائے، کیجریوال سیاست چھوڑ دیں گے۔5- 24 گھنٹے مفت بجلی اس ملک میں سب کے لیے 24 گھنٹے بجلی کا انتظام کردیں۔ غریبوں کو مفت بجلی دیں۔ میں نے سارا حساب کر لیا ہے۔ ہمارے ملک میں 4 لاکھ میگاواٹ بجلی پیدا ہوتی ہے اور پورے ملک میں بجلی کی طلب صرف 2 لاکھ میگاواٹ ہے۔ ہمارے ملک میں طلب سے دوگنی بجلی پیدا کی جا رہی ہے۔ اس کے باوجود ہمارے گھر میں بجلی نہیں ہے اور 7 سے 8 گھنٹے بجلی کٹوتی رہتی ہے۔آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ میں پیسے اور طاقت کے لیے سیاست میں نہیں آیا، مجھے کوئی شوق نہیں، میں گھر بیٹھوں گا۔ یہ لوگ یہ کام نہیں کریں گے اور جو بھی یہ کام کرے گا اسے پکڑ کر جیل میں ڈال دیا گیا تو عوام اسے برداشت نہیں کریں گے۔ یہ لوگ میرے یہ پانچ مطالبات پورے کردیں ورنہ عوام وہ اس کے ساتھ کھڑی ہوگی جو یہ کریگا۔ میں ایک کٹر محب وطن اور کٹر ایماندار ہوں اور ہم بھگوان شری رام اور ہنومان جی کے بھکت ہیں۔ ہم دہلی اور پنجاب پر رام راجیہ کے تصور کے مطابق حکومت کر رہے ہیں۔ ہم عوام کی خدمت کے لیے سیاست میں آئے ہیں۔ آج انہوں نے مجھے گرفتار کرنے کی پوری کوشش کی۔ انکم ٹیکس، سی بی آئی، ای ڈی سمیت تمام ایجنسیوں نے اپنی ذمہ داری مجھ پر چھوڑ دی ہے۔ ایسا لگتا ہے کہ کیجریوال اس ملک کا سب سے بڑا دہشت گرد ہے۔ میں دہشت گرد نہیں ہوں، انہی لوگوں نے چاروں طرف اتنی مہنگائی پیدا کر رکھی ہے۔ آج مہنگائی سب سے بڑی دہشت ہے۔ ہر گھر میں مہنگائی کی دہشت پھیلی ہوئی ہے۔
آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ ملک میں بجلی مہنگی ہے کیونکہ اس کا بندوبست بجلی کمپنیوں کے ساتھ کیا جاتا ہے۔ بجلی کمپنیاں ان کی دوست ہیں، انہوں نے ریٹ بڑھا دیے ہیں اور کچھ نہیں کرتے۔ اس سے پہلے دہلی میں بھی بجلی مہنگی تھی۔ ہماری حکومت آنے کے بعد بجلی مفت ہو گئی۔ کیونکہ ہمارے پاس بجلی ہے.کمپنیوں کو ٹھیک کیا۔ ملک میں پٹرول اور ڈیزل مہنگا ہے کیونکہ تیل کمپنیاں ان کی دوست ہیں۔ ان کی اس کے ساتھ سیٹنگ ہے۔ ملک میں تعلیم مہنگی ہے، پرائیویٹ اسکول فیسوں میں اضافہ کرتے ہیں کیونکہ ان لوگوں کا تعلیمی مافیا سے تعلق ہے۔ ادویات فروشوں کے ساتھ بھی ان کے انتظامات ہیں، اس لیے ادویات مہنگی ہیں۔ آپ لوگوں کا ایک ہی حل ہے اس سے چھٹکارا پانے کے لیے جھاڑو کا بٹن دبانا ہوگا تبھی خوشحالی آئے گی.

Related posts

وزارت اور عدالت کو مطلع کرنے کے بعد جائز انتخابات کرائے گئے : گریش جويال

Paigam Madre Watan

“Harmonizing Labor Rights and Economic Growth: AIMEP’s Visionary Agenda”: Aalima Dr Nowhera Shaikh

Paigam Madre Watan

اردو یونیورسٹی کے نظامت فاصلاتی تعلیم کے امتحانات کے نتائج جاری

Paigam Madre Watan

Leave a Comment

türkiye nin en iyi reklam ajansları türkiye nin en iyi ajansları istanbul un en iyi reklam ajansları türkiye nin en ünlü reklam ajansları türkiyenin en büyük reklam ajansları istanbul daki reklam ajansları türkiye nin en büyük reklam ajansları türkiye reklam ajansları en büyük ajanslar