Delhi دہلی

کیجریوال کو انتخابات سے دور رکھنے کی بی جے پی کی سازش ناکام، ضمانت پر باہر آنے کے بعد وہ شاندار مہم چلا رہے ہیں: دلیپ پانڈے

نئی دہلی، عام آدمی پارٹی نے پیر کو لکشمی نگر اور موتی نگر فٹ اوور برج پر ‘جیل کا جواب ووٹ سے’ مہم کے تحت ہیومن بینر پروگرام کا انعقاد کیا۔ اس کے ذریعے AAP نے لوگوں سے بی جے پی کی آمریت کو ختم کرنے کی اپیل کی۔ اس پروگرام میں سینئر لیڈر اور ایم ایل اے دلیپ پانڈے نے بھی شرکت کی۔ اوور برج پر کھڑے کارکنوں کے ہاتھوں میں ایک بڑا بینر تھا، جس پر ‘ووٹ دے کر جیل کا جواب’ دینے کی اپیل کی گئی تھی۔ اس کے علاوہ وزیر اعلی اروند کیجریوال کے دہلی کی خواتین کو ماہانہ ایک ہزار روپے دینے کے اعلان کا بھی ذکر تھا۔ ایم ایل اے دلیپ پانڈے نے کہا کہ دہلی کے عوام نے ووٹ کی طاقت سے ان کے بیٹے اروند کیجریوال کو وزیراعلیٰ منتخب کیا ۔کیجریوال کو واپس جیل جانے سے روک سکتے ہیں۔ دہلی اور ملک کو فیصلہ کرنا ہے کہ آیا بی جے پی کی آمریت، غنڈہ گردی اور جیل کی سیاست کا جواب ان کے ووٹوں سے دینا ہے یا نہیں۔ اس بار بی جے پی بری طرح ہار رہی ہے۔ اروند کیجریوال ان کی شکست کے تابوت میں آخری کیل ٹھوکنیں کا کام کرے گی۔دلیپ پانڈے نے کہا کہ وزیر اعلی اروند کیجریوال کو کسی بھی طرح سے انتخابی مہم سے دور رکھنے کے لیے انہیں بے بنیاد الزامات لگا کر سلاخوں کے پیچھے بند کر دیا گیا۔ لیکن ملک کی عدلیہ نے ستیہ میو جیتے کو برقرار رکھا۔ نتیجہ یہ نکلا کہ 21 دن کے لیے بھی اروند کیجریوال جیل کی سلاخوں کے پیچھے ڈال دیا ۔ وہ مہم چلا رہے ہیں۔ اور انہیں انتخابی مہم سے دور رکھنے کی بی جے پی کی سازش ناکام ہو گئی۔ اب دہلی اور ملک کے عوام کو فیصلہ کرنا ہے کہ بی جے پی کی آمریت، غنڈہ گردی اور جیل کی سیاست کا جواب آپ لوگوں کو اپنے ووٹوں سے دینا ہے۔ ملک کے عوام کے پاس انتخاب ہے۔ ابھی رائے دیں ہمیں طاقت دکھا کر اروند کیجریوال کو دوبارہ جیل جانے سے روکنا ہے۔ ملک اور دہلی کے عوام ہی اپنے پسندیدہ وزیر اعلیٰ اور بیٹے اروند کیجریوال کو سلاخوں کے پیچھے جانے سے روک سکتے ہیں۔دلیپ پانڈے نے کہا کہ پچھلے تمام مراحل کے رجحانات سے یہ طے ہو گیا ہے کہ بی جے پی انتخابات میں بری طرح سے ہار رہی ہے۔ جیل سے باہر آنے کے بعد اروند کیجریوال بی جے پی کی شکست کے تابوت میں آخری کیل ٹھونک رہے ہیں۔ اروند کیجریوال کو ملک کی عدلیہ سے ضمانت ملنے کے ساتھ ہی بی جے پی کی رہی سہی کسر بھی ختم ہوچکی ہے۔ 200 پار نہیں کر رہی ہے۔ اروند کیجریوال نے جیل سے باہر آنے کے 24 گھنٹے کے اندر ہی بی جے پی کو بے نقاب کر دیا ہے۔ انہوں نے بی جے پی سے ایک بہت ہی جائز سوال کیا ہے کہ کیا اس کا 75 سال سے فعال سیاست میں رہنے کا اصول بی جے پی کے وزیر اعظم پر لاگو ہوگا یا نہیں؟ اس پر نریندر مودی نے خاموشی برقرار رکھی ہوئی ہے۔ یہاں ایک کہاوت ہے کہ مونم سنکرانتی لکشنم۔ ایسا لگتا ہے کہ نریندر مودی نے اپنی خاموشی سے اروند کیجریوال کے سوال پر اتفاق ظاہر کر دیا ہے۔ اب ملک کے عوام کو فیصلہ کرنا ہے کہ جب نریندر مودی 75 سال کے ہو رہے ہیں تو وہ کس کے لیے ووٹ مانگ رہے ہیں۔

Related posts

ہندوستان میں روزگار کو فروغ دینے کیلئے ایم ای پی کا جامع نقطہ نظر  ڈاکٹر نوہیرا شیخ مختلف شعبوں میں پھیلی ہوئی حکمت عملی کی نفاذکیلئے کوشاں

Paigam Madre Watan

آل انڈیا مہیلا امپاورمنٹ پارٹی پر جوش طریقے سے تعلیم کے شعبے میں برابری کو فروغ دینے کیلئے پوری طرح مخلص: ڈاکٹر نوہیرا شیخ

Paigam Madre Watan

وزیر اعلی اروند کیجریوال نے این سی سی یوم جمہوریہ پریڈ کیمپ کا کیا معائنہ، کہا- این سی سی ملک کی خدمت کا موقع فراہم کرتا ہے

Paigam Madre Watan

Leave a Comment

türkiye nin en iyi reklam ajansları türkiye nin en iyi ajansları istanbul un en iyi reklam ajansları türkiye nin en ünlü reklam ajansları türkiyenin en büyük reklam ajansları istanbul daki reklam ajansları türkiye nin en büyük reklam ajansları türkiye reklam ajansları en büyük ajanslar