Delhi دہلی

وزیر اعلی اروند کیجریوال کی ہدایت پر وزیر صحت سوربھ بھردواج اچانک معائنہ کے لیے لال بہادر شاستری اسپتال اور ہیڈگیوار اسپتال پہنچے

نئی دہلی(پی ایم ڈبلیو نیوز)دہلی کے سرکاری اسپتالوں میں اچانک معائنہ کا سلسلہ جاری ہے۔ دہلی کے مقبول وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال نے دہلی کے اسپتالوں میں درجنوں صحت خدمات شروع کیں جن سے دہلی کے لاکھوں لوگ مستفید ہو رہے ہیں۔ یہ ٹھیک سے چل رہا ہے یا نہیں؟اس کو یقینی بنانے کے لیے دہلی کے وزیر صحت سوربھ بھاردواج مسلسل دہلی حکومت کے اسپتالوں کا اچانک معائنہ کر رہے ہیں۔ اسی سلسلے میں آج وزیر صحت سوربھ بھردواج نے دہلی کے ترلوک پوری علاقے میں واقع لال بہادر شاستری اسپتال اور ککڑڈوما کورٹ کے قریب کا دورہ کیا۔صفائی کے معاملے میں واقع ڈاکٹر ہیڈگیوار اسپتال کا اچانک معائنہ کیا۔انہوں نے اطمینان کا اظہار کیا۔اسی طرح جب وزیر سوربھ بھاردواج نے مریضوں اور ان کے اہل خانہ سے اسپتال میں فراہم کیے جانے والے کھانے کے معیار کے بارے میں سوالات کیے تو تمام مریضوں نے بھی کھانے کے معیار پر اطمینان کا اظہار کیا۔وزیر سوربھ بھردواج نے اسپتال انتظامیہ سے بھی بات کی۔ اسپتال میں یہ معلوم کرنے کی کوشش کی۔کسی بھی قسم کی کوئی پریشانی یا کمی نہیں ہے۔وزیر سوربھ بھاردواج نے دوا کی قطار میں کھڑے مریضوں سے بھی بات کی اور اسپتال میں داخل مریضوں سے بھی بات کی، ساتھ ہی اسپتال میں دوائیوں کی دستیابی بھی جانی۔ اسپتال انتظامیہ نے اسپتال کے میڈیسن ڈیپارٹمنٹ میں جا کر اس بارے میں پوچھا۔اس کے علاوہ اس بات کی بھی چھان بین کی گئی کہ اسپتال انتظامیہ کی جانب سے ادویات کے حوالے سے دی گئی معلومات درست ہیں یا نہیں۔اسپتال انتظامیہ کی جانب سے دی گئی معلومات درست پائی گئیں۔وزیر سوربھ بھاردواج نے بھی اسپتال انتظامیہ کو یقین دلایا کہ اگر اسپتال کے آپریشن میں کوئی پریشانی ہوتی ہے تو اگر انہیں کسی قسم کی پریشانی کا سامنا ہے تو وہ حمایت کے لیے ان کے ساتھ کھڑے ہیں۔ اب عملے کے نام پر وی آئی پی ٹریٹمنٹ نہیں دی جائے گی۔وزیر صحت سوربھ بھردواج نے بتایا کہ جب وہ لال بہادر شاستری اسپتال میں معائنے کے لیے پہنچے تو اسپتال میں موجود کچھ مریضوں نے شکایت کی کہ اسپتال میں کام کرنے والے ملازمین عملے کے نام پر قطار توڑ کر لوگوں کو سیدھے ڈاکٹر کے پاس بھیج رہے ہیں، پاس لیے جاتے ہیں۔ ظاہر کرنے کے لئے، جس کی وجہ سے لائن اسپتال میں مصروف عام شہریوں کو کافی پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔اس شکایت کا نوٹس لیتے ہوئے وزیر سوربھ بھردواج نے فوری طور پر اسپتال انتظامیہ کو ہدایت دی کہ عملے کے نام پر کسی بھی شخص کے ساتھ کوئی وی آئی پی سلوک نہیں کیا جائے گا۔ تمام عام لوگ کھڑے ہوگئے۔ لائن اور اپنی اپنی باری کا انتظار میں ہیں۔وہ اسی کے مطابق اپنا علاج کرا رہے ہیں، اسی طرح اسپتال میں کام کرنے والے ملازمین کو بھی اپنی باری آنے پر قطار میں کھڑے ہو کر ڈاکٹر کو دیکھانا پڑے گا۔وزیر سوربھ بھاردواج نے اسپتال انتظامیہ کو سخت ہدایات دیتے ہوئے کہا کہ اگر دوبارہ اس قسم کی شکایت سامنے آئی تو ہم اسپتال انتظامیہ پر کارروائی کریں گے۔ وزیر سوربھ بھردواج نے کہا کہ دہلی میں رہنے والے 2 کروڑ لوگ وزیر اعلی اروند کیجریوال کے لیے سب برابر ہیں۔عام شہری ہو یا اسپتال انتظامیہ میں کام کرنے والا ملازم، سب کو صحت کی مساوی خدمات ملنی چاہیے۔مریض اسپتال کی صفائی ستھرائی سے مطمئن نظر آئے۔ وزیر سوربھ بھردواج نے کہا کہ اسپتال کے معائنہ کے دوران جب انہوں نے اسپتال میں موجود مریضوں اور ان کے اہل خانہ سے اسپتال کی صفائی کے بارے میں سوالات کیے تو تقریباً سبھی مریض اسپتالوں کی صفائی سے مطمئن نظر آئے۔وزیر سوربھ بھردواج نے کہا کہ جب انہوں نے مریضوں سے پوچھا کہ یہ صفائی روزانہ ایسی ہی ہوتی ہے یا میرے معائنہ کی وجہ سے آج ایسا ہوا ہے تو مریضوں اور ان کے اہل خانہ نے کہا کہ نہیں، اسپتال کی صفائی مسلسل ہوتی ہے اور اسپتال میں صفائی کے اچھے انتظامات ہیں۔وزیر سوربھ بھاردواج اسپتال میں کہا۔میں نے صفائی کے عملے سے بھی بات کی ہے کیونکہ اسپتال میں صفائی کا عملہ کنٹراکٹ ورکر ہیں، اس لیے وزیر سوربھ بھاردواج نے ان تمام ملازمین سے ان کے مسائل کے بارے میں بھی بات کی۔وزیر سوربھ بھردواج نے پوچھا کہ کیا کمپنی کی طرف سے تمام ملازمین کو ان کی تنخواہیں پوری اور وقت پر مل رہی ہیں یا نہیں؟وزیر سوربھ بھردواج نے ان سے پوچھا کہ کیا ان کی کمپنی کسی طرح سے ان کا استحصال کر رہی ہے؟کنٹراکٹ ورکرس نے کہا کہ انہیں ان کی تنخواہیں وقت پر اور پوری مل رہی ہیں اور انہیں کسی قسم کی کوئی پریشانی نہیں ہے۔وزیر سوربھ بھردواج نے اسپتال انتظامیہ کو مشورہ دیتے ہوئے کہا کہ مستقبل میں بھی اس طرح کی پریشانی سے بچنے کے لیے اسپتال انتظامیہ کو اس طرح کی کوئی پریشانی نہیں ہے۔ اسپتال انتظامیہ ان کنٹریکٹ ورکرز کے ساتھ وقتاً فوقتاً ملاقاتیں کرتے رہیں اور ان کے مسائل پر بات ہوتی رہے، تاکہ آئندہ کوئی پریشانی نہ ہو وزیر سوربھ بھاردواج نے بتایا کہ جب وہ ڈاکٹر ہیڈگیوار اسپتال کا معائنہ کرنے پہنچے تو اسپتال میں موجود ایک مریض نے اسپتال میں کام کرنے والی ایک خاتون صفائی کارکن پر لائن توڑ کر عملے کے نام پر لوگوں سے پیسے لینے کا الزام لگایا۔ ڈاکٹر سوربھ نے اس شکایت کا نوٹس لیتے ہوئے بھاردواج نے فوری طور پر صفائی کارکن کو بلایا اور مریض کے سامنے اس معاملے کی سچائی کو جانچنے کی کوشش کی۔وزیر سوربھ بھردواج نے اس سلسلے میں کمرے کے اندر بیٹھے ڈاکٹر سے بھی سوال کیا کہ کیا انہوں نے کبھی کسی مریض سے شکایت کی ہے؟ کہ صفائی کے پیسے لینے کے بعد مریض کو عملہ یا سیکورٹی اہلکار مریض کو دکھاتے ہیں؟ڈاکٹروں نے اس کی سختی سے تردید کی اور رشوت ستانی کے خیال کو مسترد کردیا۔وزیر سوربھ بھردواج نے مزید ٹھوس معلومات کے لیے موقع پر اسپتال میں موجود درجنوں مریضوں سے براہ راست بات کی اور ان سے یہ جاننے کی کوشش کی کہ کیا اسپتال میں کوئی صفائی عملہ ہے؟سیکورٹی اہلکار یا اسپتال کا عملہ علاج جلد کروانے کے لیے کچھ دیگر عملے نے ان سے رشوت طلب کی، موقع پر موجود مریضوں نے رشوت کا خیال مسترد کردیا۔ایک مریض جو اس اسپتال میں گزشتہ 8 ماہ سے زیر علاج تھا، اس نے بھی خارج کردیا۔ پچھلے 8 ماہ میں کسی بھی قسم کی رشوت کا مطالبہ پھر بھی احتیاط برتتے ہوئے وزیر سوربھ بھاردواج نے اسپتال انتظامیہ کو تحقیقات کا حکم دیتے ہوئے ہدایت دی کہ سخت نگرانی رکھی جائے اور مستقبل میں اسپتال سے ایسی کوئی شکایت نہیں ملنی چاہیے۔

Related posts

ایم سی ڈی میں کام کی رفتار برقرار رہے گی، کیجریوال حکومت نے 803.69 کروڑ روپے کی تیسری قسط جاری کی: وزیر خزانہ آتشی

Paigam Madre Watan

کیجریوال نے ڈاکٹر امبیڈکر کے مہاپری نروان دیوس پر کہا، "ہم بابا صاحب کے شاگرد ہیں، صرف AAP ہی ملک کو تعلیم کی ضمانت دے سکتی ہے۔”

Paigam Madre Watan

بی جے پی وزیر اعلی اروند کیجریوال کی شبیہ کو خراب کرنے کے لیے سوشل میڈیا پر مہم چلا رہی ہے، AAP الیکشن کمیشن سے شکایت کرے گی: راگھو چڈھا

Paigam Madre Watan

Leave a Comment