Delhi دہلی

کیجریوال نے 12ویں نیشنل کونسل میٹنگ میں کہا، "آپ کو 12 سالوں میں بے مثال کامیابی ملی، ہم نے وہ کیا جو دوسری پارٹیاں 75 سالوں میں نہیں کر سکیں۔”

ہم نے تعلیم، صحت، بجلی، مہنگائی اور روزگار کی بات کی، جو کسی اور پارٹی نے نہیں کیا


اگر آپ بچوں کو اچھی تعلیم دیں گے اور غریبوں کا مفت علاج کریں گے تو آپ کو جیل جانا پڑے گا، ہمیں اس کے لیے تیار رہنا ہوگا


  • نئی دہلی، 31 دسمبر: عام آدمی پارٹی کے قومی کنوینر اور دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال نے اتوار کو پارٹی کی قومی ایگزیکٹو اور 12 ویں قومی کونسل کی میٹنگ کی صدارت کی۔ ورچوئل میڈیم کے ذریعے منعقدہ دونوں اجلاسوں میں ملک بھر سے پارٹی عہدیداروں نے شرکت کی۔ جبکہ پنجاب کے وزیر اعلی بھگونت مان اورقومی تنظیم کے جنرل سیکرٹری ڈاکٹرسندیپ پاٹھک خود موجود تھے۔ اس دوران آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ عام آدمی پارٹی کو پچھلے 12 سالوں میں بے مثال کامیابی ملی ہے۔ ہم نے وہ کام کر دکھایا جو دوسری جماعتیں 75 سال میں بھی نہیں کر سکیں۔ پچھلے دو سالوں میں پنجاب میں عام آدمی پارٹی کی حکومت نے جو کام کیا ہے وہ ظاہر کرتا ہے۔اگر ہماری پوری ریاست میں حکومت ہو تو ہم بہت تیزی سے کام کر سکتے ہیں۔انہوں نے مزید کہا کہ AAP نے صرف 10 سالوں میں قومی سیاست میں بہت متاثر کن اثر ڈالا ہے۔ ملک میں پہلی بار اپوزیشن جماعتوں کو اسکول اور اسپتال کے مسائل پر بات کرنے پر مجبور کیا گیا ہے۔ اب ان لوگوں نے ہمارا لفظ "گارنٹی” اور ہمارا منشور بھی چرا لیا ہے۔ اب یہ لوگ مودی کی گارنٹی اور کانگریس کی گارنٹی بھی کہنا شروع کر دیا ہے۔ ان لوگوں نے عوام کو گارنٹی دی لیکن کسی نے پوری نہیں کی کیونکہ ان کی نیتیں ٹھیک نہیں جب کہ ہم اپنی تمام ضمانتیں پوری کر رہے ہیں۔ اس دوران انہوں نے یہ بھی کہا کہ ہمارے پانچ رہنما جو جیل میں ہیں ہمارے ہیرو ہیں اور ہمیں ان پر بہت فخر ہے۔ اگر آپ بچوں کو اچھی تعلیم دینا چاہتے ہیں۔اور اگر ہم غریبوں کا مفت علاج کرنے کی بات کریں گے تو ہمیں جیل جانا پڑے گا اور اس کے لیے تیار رہنا پڑے گا۔
    آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے نیشنل کونسل میٹنگ سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ یہ پارٹی کی 12ویں نیشنل کونسل میٹنگ ہے۔ 12 سال کسی بھی پارٹی کی تاریخ میں کچھ نہیں۔ ایم ایل اے کی سیٹ جیتنے میں ایک آدمی کی پوری زندگی جوتے گھس جاتے ہیں۔ 12 برس عام آدمی پارٹی کو بے مثال کامیابی ملی ہے۔ اس کی وجہ صرف یہ ہے کہ ہم نے وہ کر دکھایا جو دوسری جماعتیں 75 سالوں میں نہیں کر سکیں۔ لوگ ان پارٹیوں سے نالاں تھے، لوگوں کا جینا دن بہ دن مشکل ہوتا جا رہا تھا۔ لوگوں نے عام آدمی پارٹی کو پہلے دہلی اور پھر پنجاب میں موقع دیا۔جو کام ہم نے کیا وہ کسی اور جماعت نے نہیں کیا۔ ہم نے تعلیم، صحت، بجلی، مہنگائی اور روزگار کی بات شروع کی، جو کسی اور جماعت نے نہیں کی۔ ملک میں پہلی بار لوگوں کو ان جماعتوں کا حقیقی متبادل ملا اور لوگ کام کی سیاست کو پسند کرنے لگے۔
    آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے پنجاب میں ہونے والے کام کا کریڈٹ وزیر اعلی بھگونت مان کو دیتے ہوئے کہا کہ پچھلے 75 سالوں سے ان دونوں پارٹیوں نے ایک کے بعد ایک پنجاب پر حکومت کی اور ریاست کو اس بری حالت میں چھوڑ دیا۔نوجوانوں، تاجروں، عوام اور کسان سب غمگین تھے۔ ان لوگوں نے سرکاری خزانے کو لوٹا اور خالی کیا۔ اس کے بعد تقریباً دو سال پہلے دہلی کے کاموں کو دیکھ کر پنجاب کے لوگوں نے عام آدمی پارٹی کو موقع دیا۔ پنجاب میں دو سال کے اندر جو کام ہوا ہے اس سے پتہ چلتا ہے کہ اگر پوری ریاست میں ہماری حکومت ہو تو عام آدمی پارٹی کتنی تیزی سے کام کر سکتی ہے۔ تمام کام ہم نے دہلی میں 8-9 سال سے کیے ہیں۔آج پنجاب کے اندر کئی شعبوں میں زیادہ کام ہوا ہے۔
    آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے پنجاب میں AAP حکومت کی کامیابیوں کا شمار کرتے ہوئے کہا کہ ملک میں کئی ایسے علاقے ہیں جہاں بجلی نہیں ہے۔ دہلی کی طرح پہلے پنجاب میں بھی بجلی نہیں تھی لیکن 24 گھنٹے مفت بجلی ملتی ہے۔ جب ہماری حکومت بنی تو 6 سے 7 گھنٹے بجلی کی طویل کٹوتی ہوتی تھی۔ ہم نے عوام سے 24 گھنٹے بجلی دینے کا وعدہ کیا تھا۔ حکومت بننے کے بعد ہم نے محسوس کیا کہ 24 گھنٹے بجلی فراہم کرنے میں کم از کم 4-5 سال لگیں گے۔ لیکن دو سالوں میں آج پنجاب میں 24 گھنٹے بجلی ملتی ہے اور بجلی کی کٹوتی نہیں ہوتی۔ پہلے کسان بجلی کے لیے ترستے تھے ، لیکن آج اسے پوری بجلی مل رہی ہے۔ ابھی پنجاب میں 90 فیصد لوگ مفت بجلی حاصل کر رہے ہیں۔ سب سے اچھی بات یہ ہے کہ بجلی پیدا کرنے والا سرکاری ادارہ PSPCL ہماری حکومت بننے سے پہلے خسارے میں چل رہا تھا۔ لیکن پنجاب میں ہماری حکومت بننے کے بعد لوگوں کو 24 گھنٹے مفت بجلی ملنے لگی اور کمپنی کو تقریباً 540 کروڑ روپے کا منافع بھی ہوا۔اس کی وجہ بہت واضح ہے کہ ہماری نیت صاف ہے، ہم محنت کرتے ہیں، ہم پڑھے لکھے لوگ ہیں۔
    آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ اب تک ہم نے دیکھا ہے کہ جب بھی کوئی حکومت بنتی ہے تو سب سے پہلے وہ سرکاری کمپنیوں (PSUs) کو فروخت کرتے ہیں۔ وہ ایئر لائنز، ہوائی اڈے، کوئلے کی کانیں، BHEL، ریلوے، سب کچھ بیچتے ہیں۔ سب جانتے ہیں کہ بکنے میں کرپشن کیسے ہوتی ہے۔ 10 ہزار کروڑ اسے صرف ایک ہزار کروڑ میں سرکاری کمپنی کو دیدیتے ہیں ۔ پھر پرائیویٹ کمپنی اس سے بہت پیسہ کماتی ہے۔ یہ ہندوستان کی تاریخ میں پہلی بار ہو رہا ہے کہ پنجاب حکومت نے پنجاب میں چلنے والے نجی تھرمل پاور پلانٹ کو خرید لیا ہے۔ یہ 4,000 کروڑ روپے کی کمپنی تھی جسے حکومت نے 1,080 کروڑ روپے میں خریدا ہے۔ یہ ظاہر کرتا ہے کہ یہ کام کتنی ایمانداری سے کیا گیا ہے؟ اس سے سرکاری رقم کی بھی بچت ہوئی ہے۔ اب حکومت خود اس کمپنی کے ذریعے سستی بجلی پیدا کرے گی۔ اس سے بجلی کی قیمت میں 1.5 روپے فی یونٹ کمی ہوگی۔
    آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ دہلی میں صحت کے شعبے میں ہمارے کام میں ایل جی صاحب اور مرکزی حکومت کی طرف سے بہت سی رکاوٹیں آئیں اور کافی جدوجہد کے بعد آج دہلی میں 500 محلہ کلینک ہیں، جب کہ پنجاب میں۔ صرف ڈیڑھ سے دو ہیں، ایک سال میں 650 محلہ کلینک کام کر رہے ہیں اور 26 جنوری تک ان کی تعداد 750 ہو جائے گی۔ اسی طرح پنجاب کے 40 کے قریب بڑے سرکاری اسپتالوں کی بحالی کی جا رہی ہے۔ ان اسپتالوں کو پرائیویٹ اسپتالوں سے بہتر بنایا جا رہا ہے۔ پورے پنجاب میں اگر کوئی شدید بیمار ہو جائے تو وہ بڑے اسپتالوں میں جا کر مفت علاج کروا سکتا ہے۔ لوگوں کو دوا اور علاج کی ضرورت ہے۔کوئی خرچہ ادا نہیں کرنا پڑے گا۔ اسی طرح پنجاب میں 20 ہزار سرکاری اسکول ہیں اور تمام اسکولوں میں کچھ نہ کچھ کام جاری ہے۔ کہیں بیت الخلاء کی مرمت ہو رہی ہے، کہیں پینے کے پانی کا انتظام ہو رہا ہے، کہیں اساتذہ کو تربیت کے لیے بھیجا جا رہا ہے۔پرنسپل کو تربیت کے لیے بیرون ملک بھیجا جا رہا ہے اور عمارت کی مرمت کی جا رہی ہے۔ صرف دو سالوں میں اسکول کے نتائج بھی اچھے آنے لگے ہیں۔ حال ہی میں نے امرتسر میں ایک ماڈل گورنمنٹ اسکول کا افتتاح کیا۔ ایسے مزید 117 اسکولز آف ایمننس بنائے جا رہے ہیں جو کسی بھی پرائیویٹ اسکول کو پیچھے چھوڑ دیتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ وہ الیکشن سے پہلے جب بھی پنجاب جاتے تھے تو ہمیشہ کچے ملازمین کو دھرنے پر پاتے تھے۔ حکومت ان کو یقینی نہیں بنا رہی تھی۔ ہماری حکومت نے تمام کچے ملازمین کو کنفرم کیا۔ اب سب کام کر رہے ہیں۔ اور سب خوش ہیں۔پنجاب میں نوجوانوں کو بہت زیادہ سرکاری نوکریاں دی جا رہی ہیں۔ 40 ہزار سے اب تک مزید سرکاری نوکریاں دی ہیں۔ اس کے علاوہ پنجاب میں تقریباً 50 ہزار کروڑ روپے کی سرمایہ کاری آئی ہے۔ اس سرمایہ کاری سے تقریباً 3 لاکھ روزگار کے مواقع پیدا ہوں گے۔ جمشید پور کے بعد ٹاٹا اسٹیل کا دوسرا سب سے بڑا پلانٹ لدھیانہ میں لگایا جا رہا ہے۔ پنجاب میں آبپاشی کے شعبے میں زبردست کام ہو رہا ہے۔ گزشتہ دو سالوں میں پنجاب کے اندر کئی نئی نہریں بنی ہیں۔ میں یہ دیکھ کر حیران ہوں۔ مجھے امید ہے کہ اگلے سال ڈیڑھ سال میں پنجاب کے ہر کھیت تک نہری پانی پہنچ جائے گا۔
    آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ دہلی کے بعد اب پنجاب میں بھی بزرگوں کو یاترا پر لے جانے کا منصوبہ شروع ہو گیا ہے۔ ہم نے سب سے پہلے دہلی میں یاترا اسکیم شروع کی۔ دہلی میں لوگوں کو بسوں اور ٹرینوں میں یاترا پر لے جایا جاتا ہے ۔ جبکہ وزیر اعلی بھگونت مان یاتریوں کے لیے چارٹرڈ پروازیں بک کر لی گئی ہیں۔ اب سب سے غریب بھی پٹنہ صاحب، وارانسی اور ناندیڑ صاحب جانے کے لیے چارٹرڈ فلائٹ میں سوار ہوں گے۔ پنجاب میں گھر گھر خدمات کی فراہمی شروع کر دی گئی ہے۔ حکومت نے 1076 ہیلپ لائن نمبر جاری کیا ہے۔ پنجاب کے عوام اس ہیلپ لائن نمبر پر ہیں۔لیکن کال کرکے آپ گھر بیٹھے سرکاری خدمات حاصل کرسکتے ہیں اور کسی سرکاری دفتر جانے کی ضرورت نہیں ہے۔ اس کے بعد راشن اسکیم کی ڈور اسٹیپ ڈیلیوری بھی شروع ہونے جا رہی ہے۔ لوگوں کو راشن کی دکان پر جانے کی بھی ضرورت نہیں پڑے گی، اس کے بجائے بوریوں میں بند آٹا اور چاول ان کے گھروں تک پہنچائے جائیں گے۔ پنجاب میں اے اے پی حکومت کو بنے صرف دو سال گزرے ہیں اور دو سال کچھ بھی نہیں ہیں۔ اگر سب چاہیں تو ہم کیا نہیں کر سکتے؟
    آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ ہم نے گزشتہ 10 سالوں میں بہت مؤثر طریقے سے قومی سیاست میں قدم رکھا ہے۔ پہلی بار یہ لوگ الیکشن میں تعلیم کی بات کرنے پر مجبور ہوئے ہیں۔ اب تمام جماعتوں نے اسکولوں اور اسپتالوں کی بات شروع کر دی ہے۔ ہم نے ان سیاسی جماعتوں میں شمولیت اختیار کی ہے۔قائدین کے الفاظ بدل ڈالے۔ اب یہ لوگ مودی کی گارنٹی اور کانگریس کی گارنٹی بھی دینے لگے ہیں، جب کہ کیجریوال کی گارنٹی کی اصطلاح ہماری تھی۔ جب لوگوں نے کیجریوال کی گارنٹی سنی تو اس پر یقین کیا۔ اس لیے وہ سمجھتے ہیں کہ اگر آپ گارنٹی کا لفظ استعمال کریں گے تو لوگ اعتماد کریں گے، لیکن یہ دیکھنا ہوگا کہ گارنٹی لوگ کس پر اور کس پر اعتماد کرتے ہیں؟ ان لوگوں نے ہمارا لفظ "گارنٹی” چرا لیا ہے اور ہمارا پورا منشور چرا لیا ہے۔ اب تمام فریق مفت بجلی فراہم کرنے کی بات کرتے ہیں اور ہماری تمام ضمانتیں نقل کرتے ہیں۔ وعدے تو ہر کوئی کرتا ہے لیکن پورا کرنے والا کوئی نہیں۔دونوں جماعتوں نے عوام کو ضمانتیں دی ہیں۔لیکن ان میں سے کسی نے بھی اپنا وعدہ پورا نہیں کیا۔ اس کے ساتھ ساتھ ہم اپنی تمام ضمانتیں پوری کر رہے ہیں۔ پہلے دہلی میں مکمل ہوا اور اب پنجاب میں مکمل ہو رہا ہے۔ ان ضمانتوں کو پورا کرنے کے لیے آپ کی نیت صاف ہونی چاہیے، ان کی نیتیں خراب ہیں۔ وہ ہماری ضمانتوں کی نقل کر سکتے ہیں لیکن ضمانتوں پر عمل درآمد کی نیت کہاں سے لائیں گے؟ یہ لوگ پہلے دن سے ہی پیسے کمانا شروع کر دیتے ہیں۔ ساتھ ہی عام آدمی پارٹی کا ارادہ یہ ہے کہ ہمیں اور کتنا کام کرنا ہے۔ اس لیے ان میں نہ کام کرنے کا ارادہ ہے اور نہ ہی خواہش۔
    آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ ہمارے لیے ملک بھر میں اپنی تنظیم کو مضبوط کرنا اور اسے مضبوط کرنا بہت ضروری ہے۔مضبوط تنظیم کے بغیر الیکشن نہیں جیتا جا سکتا۔ ریاستوں میں پارٹی کی تنظیم سازی کے لیے ہر کسی کو اپنی اپنی ریاستوں میں سخت محنت کرنی ہوگی۔ لوک سبھا انتخابات میں عام آدمی پارٹی بھارت اس اتحاد کا حصہ ہے۔ ہمیں سیٹ شیئرنگ میں جو بھی سیٹیں ملیں اس پر ہمیں اچھی طرح الیکشن لڑنا ہے اور ہم ان تمام سیٹوں کو جیتنے کی ہر ممکن کوشش کریں گے۔ جن ریاستوں میں عام آدمی پارٹی لوک سبھا الیکشن نہیں لڑ رہی ہے، ان ریاستوں سے پارٹی کے رضاکار آکر مدد کریں گے جہاں الیکشن لڑا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ لوک سبھا کے بعد ہریانہ اسمبلی الیکشن ہمارے لئے سب سے بڑا الیکشن ہے۔ عام آدمی پارٹی حکومت بنانے کے ارادے سے ہریانہ اسمبلی انتخابات لڑے گی اور ہم اس میں اپنی پوری طاقت لگا دیں گے۔ ہریانہ میں انتخابات اکتوبر نومبر میں ہونے کا امکان ہے۔
    آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ ہمارے ملک میں تقریباً 1350 سیاسی پارٹیاں ہیں۔ عام آدمی پارٹی ان 10 سالوں میں 1350 سیاسی جماعتوں میں تیسرے نمبر پر آئی ہے۔ اس کے علاوہ 5 سے 10 اور سیاسی جماعتوں کے بارے میں بھی ملک کے لوگ جانتے ہوں گے۔ ہم نے اپنی پارٹی بنائی۔ اگر ہم بھی ان 1350 سیاسی جماعتوں کی طرح کامیاب ہو جائیں۔اگر ہم نہ ہوتے اور کچھ اچھا نہ کیا ہوتا تو ہماری پارٹی کا کوئی لیڈر جیل نہ جاتا اور آج سب اپنے گھروں اور خاندانوں میں خوش ہوتے۔ ہم نے عوامی بھلائی کے لیے جو راستے چنے ہیں اس کے لیے ہمیں جیل جانا پڑے گا۔ بچوں کو اچھی تعلیم دو گے تو جیل جانا پڑے گا، غریبوں کا مفت علاج کرو گے تو جیل جانا پڑے گا۔ اس لیے ہم سب کے لیے یہ فیصلہ کرنا ضروری ہے کہ ہم جیل جانا چاہتے ہیں یا نہیں۔ اگر آپ جیل جانے کو تیار ہیں تو بچوں کو اچھی تعلیم اور غریبوں کا مفت علاج کرنے کی راہ پر گامزن رہیں۔
    آپ کے قومی کنوینر اروند کیجریوال نے کہا کہ ان دو بڑی پارٹیوں نے اس ملک پر 75 سال حکومت کی ہے، وہ اتنی آسانی سے اقتدار نہیں چھوڑیں گے۔ مجھے لگتا ہے کہ ہمارے سامنے ایک جدوجہد ہے، لیکن ہمیں اداس ہونے کی ضرورت نہیں ہے۔ ہمارے پانچ رہنما جو جیل میں ہیں آج ہمارے ہیرو ہیں۔ ہم وہ سب پر بہت فخر ہے۔ میں وکلاء سے مسلسل رابطے میں ہوں۔ یہ بہت اچھی بات ہے کہ جیل میں رہنے والے ہمارے تمام رہنما اب بھی حوصلے میں ہیں۔ جس دن منیش سسودیا کی ضمانت منسوخ ہوئی، ان کی طرف سے پیغام آیا کہ کوئی مسئلہ نہیں،مجھے جتنے تک جیل رہنا ہوگا رہ لونگا. یہ پورا کیس فرضی ہے اور میری لڑائی جاری رہے گی۔

Related posts

عام آدمی پارٹی نے ون نیشن ون الیکشن کے خلاف رائے اعلیٰ سطحی کمیٹی کو بھیجی

Paigam Madre Watan

آپ کے ریاستی نائب صدر اور ایم ایل اے گلاب سنگھ یادو نے مٹیالا اسمبلی میں "مین کیجریوال” گھر گھر مہم کا آغاز کیا

Paigam Madre Watan

حکومت کل سے ایک ماہ تک دہلی میں کھلے عام جلانے کے خلاف مہم چلائے گی: گوپال رائے

Paigam Madre Watan

Leave a Comment

türkiye nin en iyi reklam ajansları türkiye nin en iyi ajansları istanbul un en iyi reklam ajansları türkiye nin en ünlü reklam ajansları türkiyenin en büyük reklam ajansları istanbul daki reklam ajansları türkiye nin en büyük reklam ajansları türkiye reklam ajansları en büyük ajanslar