Blog

وزارت اور عدالت کو مطلع کرنے کے بعد جائز انتخابات کرائے گئے : گریش جويال

نئی دلی (پی ایم ڈبلیو، بیورو)ہندوستان اسکاؤٹس اینڈ گائیڈس، جو 1928 سے چل رہا ہے، کا اب بھی اپنا مرکزی دفتر نہیں ہے اور اس کے بینک اکاؤنٹس بند ہیںدہلی: ہندوستان اسکاؤٹس اینڈ گائیڈس کا قیام 1928 میں بھارت رتن مدن موہن مالویہ نے ہندوستانی طلبہ کو تربیت یافتہ کرنے کے لیے کیا تھا جو انتہائی نامساعد حالات میں اسکاؤٹنگ کی تربیت سے محروم تھے۔ برطانوی حکومت کے دوران، ہندوستانی طلباء میں اسکاؤٹنگ کی تربیت صرف ’ہندوستان اسکاؤٹس اینڈ گائیڈس‘ کے ذریعے ہی ممکن ہوئی۔ تقریباً سو سال ہونے آئے، آج آزادی کے 70 سال بعد بھی 50 لاکھ طلبہ کو باقاعدگی سے تربیت دیتے ہوئے ’ہندوستان اسکاؤٹس اینڈ گائیڈس‘ کو ایک بار پھر سرکاری مشینری کی عدم فیصلہ سازی اور عدالتوں میں جھگڑوں کی وجہ سے مختلف مسائل کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ نوزارت نوجوان اور کھیل سے سبکدوش ہوئے چمپت سنگھ تھے، جو 6 فروری 2022 کو 70 سال کی عمر مکمل کر چکے تھے اور اس کے فوراً بعد نیشنل ایگزیکٹو کی میٹنگ میں گریش جويال جی کو نیشنل سکریٹری مقرر کیا گیا۔ سابق اور سبکدوش ممبران کی جانب سے عہدے کی لڑائی کی صورت میں ہندوستان اسکاؤٹس اینڈ گائیڈس کو چلانے کا انتظام عالمی وبا کووِڈ کے دور سے بناہوا تھا، اسے ختم کرنے کا سہرا سینئرممبر گریش جویال کو جاتا ہے۔ اس بارے میں مختصر جانکاری دینے کے لیے قومی سکریٹری گریش جویال انٹرویو میں ہمارے ساتھ موجود ہیں۔نامہ نگار: حکومت کے کس رویے کی وجہ سے تنظیم آج ایک بار پھر مسائل سے دوچار ہے؟گریش جویال: ہندوستانی عوام کے فیصلے کی بنیاد پر مرکزی حکومت کی قیادت میں تبدیلی سے ناراض ہوکر کسی ایک سرکاری ملازم یا افسر کے گمراہ کن یا متنازعہ یا زیر التوا فیصلے کی وجہ سے پوری حکومت کو کٹہرے میں نہیں کھڑا کیا جاسکتا۔نامہ نگار : وزارت کے کس افسر کی کارروائی کی وجہ سے آج ایک بار پھر ادارے کو مشکلات کا سامنا کرنا پڑا؟گریش جویال: معاشرے اور ملک کے مفاد میں، حکومت نے نوجوانوں اور کھیل کی وزارت کے ذریعہ تسلیم شدہ تمام اداروں میں عہدوں کے لیے زیادہ سے زیادہ عمر 70 سال مقرر کی ہے۔ لیکن یہ حکم جاری کرتے ہوئے انڈر سکریٹری ایس کے پانڈے نے 24 اگست 2017 کو ایسا کیا جس کی وجہ سے تنظیم کا سارا کام بے غیر منظم ہو گیا۔ حکومتی حکم نامے کے مطابق 70 سال سے رضاکارانہ خدمات انجام دینے والے تمام افسران کو فوری طور پر منسوخ کرنے کا حکم جاری کیا گیا۔ اس حکم کی تعمیل میں قومی نائب صدر، قومی سربراہ، قومی سکریٹری، ٹریننگ کمشنر سمیت کئی سینئر عہدیداروں کو فوری اثر سے فارغ کردیا گیا۔ ریٹائرڈ آئی پی ایس افسر انیل پرتھم کو بھی 2017 میں کوئی نوآ بجکشن سرٹیفکیٹ نہ ہونے کی وجہ سے تنظیم سے معطل کر دیا گیا تھا لیکن احمد آباد میں مرکزی دفتر کو زبردستی دکھا کر انڈر سیکرٹری کے ساتھ مکالمے کا کھیل کھیل کر تنظیم کا دھڑا بننے کا ڈرامہ رچایا۔ جیسا کہ اس وقت کے افسران نے الزام لگایا تھا کہ سرکاری محکموں میں بیٹھے کچھ لوگوں نے 2 اکتوبر 2017 کے انتخابات کو اس لیے قبول نہیں کیا کہ انہیں اپنی مرضی کے اہلکار نہیں مل سکے۔نامہ نگار: اس کا کیا اثر ہوا؟: گریش جویال: مگر، ہر کسی کی علم اور فیصلہ کرنے اور سوچنے کی صلاحیت مختلف ہوتی ہے۔ اس لیے الزام نہیں لگایا جا سکتا لیکن جب تنظیم نے وزارت کے مینڈیٹ کو قبول کیا اور نئی ایگزیکٹو دی تو آئی پی ایس کے زیر اثر انڈر سکریٹری ایس کے پانڈے نے دباؤ بنانے کی پالیسی کو نافذ کرتے ہوئے زبردستی قبول کر لیا کہ وہ تنظیم میں ہیں۔ نامہ نگار: وزارت کے عملے کے افسران کو اب یہ کس قسم کی تکلیف ہوئی ہے کہ یہ اصول پہلے ہی نافذ ہو چکا تھا۔گریش جویال: تنازعہ کا مسئلہ اس لیے کھڑا ہوا کیونکہ وزارت نے 70 سال سے زائد عرصہ قبل ہٹائے گئے اراکین اور معطل کیے گئے اراکین سے دوبارہ رابطہ کیا اور ان سے تحریری طور پر رابطہ کیا۔ نیتی آیوگ نے ​​ستر سال سے زیادہ عمر کے لوگوں کو پاس ورڈ بھی فراہم کیے ہیں۔ ایسے میں بہت سے لوگ زبردستی نیشنل سکریٹری کے عہدے پر قابض ہیں اور کچھ حامیوں کے ساتھ مل کر غیر قانونی کیمپ لگا رہے ہیں اور سرٹیفکیٹ دے رہے ہیں۔نامہ نگار: ایسے ارکان کے نام کیا ہیں؟گریش جویال: ان میں سب سے پہلے شرینواس شرما ہیں، جن کی عمر تقریباً نوے سال ہے، جن کے گھر کے پتے پر وزارت اب بھی خط و کتابت کر رہی ہے جب کہ وہاں ایک خاتون رہ رہی ہے۔ اس کے بعد سابق چیئرمین (پردھان) شری رویندرا تلوار ہیں، جن کی عمر پچھتر سال ہے اور سابق انڈر سیکریٹری، شری چمپت سنگھ، 73 سالہ، وزارت کھیل سے ریٹائر ہوئے ہیں۔ یہ تینوں مل کر بھرت اروڑہ کے خاندان کے تمام افراد جیسے بیوی، بہنوئی، بھابھی وغیرہ کو مختلف عہدوں پر بٹھا کر تنظیم کو زبردستی چلانے کا ڈرامہ کر رہے ہیں۔دوسری طرف سابق چیف کمشنر مسٹر ایس کے نندا مسٹر ڈی کے یادو اور سابق خزانچی مسٹر مہاسنگھ نے ایک سرکاری ٹیچر نیرج پاٹل اور دو نئے لوگوں کے ساتھ مل کر ہندوستان اسکاؤٹس کے نام پر ایک کمرہ کرایہ پر لیا اور ایک نئے پتے پر قومی دفتر قائم کیا اور قانونی حربے استعمال کرتے ہوئے مقدمے چلا رکھے ہیں۔ گجرات کے سابق ڈی جی پی اور سابق آئی پی ایس انیل پرتھم نے بغیر انتخابات کے خود کو ہندوستان اسکاؤٹس کا قومی صدر دکھایا ہے اور کسی عہدیدار کو نہیں رکھا ہے اور جو کبھی کبھار الگ الگ بات چیت میں ان پر دباؤ ڈالتے ہیں کہ وہ انہیں چیف کمشنر تسلیم کریں۔نامہ نگار: وزارت کے کس اہلکار نے اور کس انداز میں ایسی بات کی کہ ’ہندوستان اسکاؤٹس اینڈ گائیڈس‘ مشکل میں پڑ گیا؟؟گریش جویال: سب سے پہلے وزارت نے اپنی طرف سے گرانٹ کو روک دیا اور اس نے ایسا تو کیا ہی، ساتھ ہیسب سے پہلے تو حکومت ہند کی وزارت خزانہ کے خط پر گجرات کے سابق ڈی جی پی، معطل کمشنر انل پرتھم، آئی پی ایس، نے اسٹیٹ بینک آف انڈیا کا اکاؤنٹ بند کر دیا۔ انڈر سکریٹری شری ایس کے پانڈے اور دیگر اہلکاروں نے آئی پی ایس افسر انیل پرتھم اور ہر عہدیدار کے احمد آباد کے پتے کے ساتھ میل مواصلات اور خط و کتابت شروع کی، جب کہ مرکزی دفتر ہمیشہ دہلی میں رہتا تھا اور خط و کتابت کا حق تنظیم کے اصولوں کے مطابق نیشنل سیکرٹری کے پاس ہی ہے۔نامہ نگار: اس کے بعد آپ لوگوں نے کیا کیا؟گریش جویال: سہ سالہ مدت کی تکمیل کو دیکھتے ہوئے تنظیم کے قومی کونسل کے اراکین نے قومی کونسل کے انتخابات کرائے اور نئے عہدیداروں کا تقرر کیا اور اس بارے میں بینک اور وزارت کے حکام کو تفصیلی جانکاری دی، لیکن انہوں نے مکمل طور پر سرد رویہ اپنایا۔اب جبکہ وارانسی میں 2 اکتوبر 2023 کو سہ سالہ مدت کے لیے انتخابات بھی ہو چکے ہیں، یہ دیکھنا باقی ہے کہ کیا وزارت اب بھی غیر فیصلہ کن حالت میں رہے گی۔نامہ نگار: مسئلے کی جڑ کیا ہے؟گریش جویال: محکمے کے ذریعے قواعد کو پیچیدہ بنانے والے عمل۔ درحقیقت، وزارت کے ملازمین اور افسران جن قوانین کی بات کرتے ہیں وہ لگے کرنے میں اپنی رضامندی چاہتے ہیں ۔ یہ کوئی ذاتی الزام نہیں ہے لیکن پورا کام کرنے والا نظام اب بھی میکالے کے مطابق کام کرتا نظر آتا ہے۔ عوام کو قواعد و ضوابط کا ایک فریم بتایا جاتا ہے جسے کوئی بھی آسانی سے پورا نہیں کر سکتا۔ پھر، قاعدے میں نرمی فراہم کرنے کا طریقہ اس شخص کے لیے استثناء کی طرح بنایا جاتا ہے جسے سہولت یا فائدہ دیا جانا ہے۔ اگر اتفاق سے کوئی درخواست دہندہ تمام معیارات پر پورا اترتا ہے تو اوپر سے ایک پیغام دیا جائے گا کہ اسے اپنا کام کرنے کو کہا جائے۔نامہ نگار: ان حالات میں آپ لوگوں نے کیا کیا؟ گریش جویال: صبر کر رہے ہیں۔ تنظیم کے بانی مہامانا جی کی قربانی ممبران میں توانائی کی وجہ ہے۔ انہوں نے انگریز حکومت کے مظالم کو برداشت کیا اور اپنی عظمت کی وجہ سے آزادی کے ستر سال تک وزارتوں اور حکومتوں کی بے حسی کو برداشت کیا، اس لیے تنظیم کے تمام معززین نے اپنی اکائیوں کو ساتھ لے کر خدمت قلق کی سبھی کام کرتے رہنے کا عزم کیا ہے۔ نیشنل ایگزیکٹیو کمیٹی اور راشٹریہ پریشد سمّیلن کے تحت یہ فیصلہ کیا گیا کہ اسکولوں میں تربیتی پروگرام اور معاشرے میں خدمت کا کام بلا تعطل جاری رہے گا۔نامہ نگار: موجودہ حالات میں قومی صدر اور قومی سربراہ کون ہے؟ اور دفتر کہاں ہے؟گریش جویال: اس وقت سابق ایم ایل اے شری نرسنگھ مینگجی قومی صدر ہیں اور شری کروناکر قومی سربراہ ہیں۔ ایک طرح سے نیشنل ایگزیکٹیو نے مجھے نیا قومی سیکرٹری انچارج بنا کر تنظیم کو چلانے کا ایک راستہ بنا دیا۔ 2 اکتوبر کو ہونے والے انتخابات میں، آنے والی سہ سالہ میعاد کے لیے ووٹنگ میں مسٹر نرسنگھ مینگجی کو قومی صدر منتخب کیا گیا اور نئی ایگزیکٹو میں، مسٹر گریش جویال کو قومی سکریٹری اور ڈاکٹر اتل کمار کو آئندہ مدت کے لیے جوائنٹ سیکریٹری منتخب کیا گیا۔ الیکشن میں مسٹر شرد کمار سی اے، مسز راج لکشمی، مسز ونیتا شرما، مسٹر ہرسوروپ شرما، مسٹر نرسنگ اگروال اور مسٹر ایچ پی سنگھ، ہائی کورٹ، جبل پور کے سابق جج، قومی مجلس عاملہ کے نائب صدر کے عہدے کے لیے منتخب ہوئے۔ ان کے علاوہ ڈاکٹر کروناکر پردھان کو قومی صدر کے عہدے پر، ڈاکٹر وید پرکاش سنگھ کو جنرل سکریٹری کے عہدے پر اور شری مدھوسودن گپتا کو سنٹرل ایگزیکٹو میں نیشنل چیف کمشنر کے عہدے پر مقرر کیا گیا۔ تنظیم نے نیشنل آرگنائزیشن کمشنر شری ستیہ نارائن سمن اور نیشنل ٹریننگ کمشنر شری یتندر کمار سکسینہ کو مقرر کیا۔ اور ریکارڈ رجسٹریشن آفس کیشو پورم، دہلی کی رکاوٹ کے باوجود ریاستی اور ضلعی دفاتر سے تعلیمی تربیت کا کام مکمل طور پر چلایا جا رہا ہے۔ پھر اس میں اینٹوں اور پتھروں کی جگہ کو نہ دیکھیں، ہم سب کے دلوں میں ہندوستان کے سینکڑوں پسماندہ طلباء کے لیے دفتر کی جگہ ہے۔

Related posts

“Harmony’s Horizon: Dr. Nowhera Shaikh’s Visionary Journey for a Flourishing Arunachal Pradesh”

Paigam Madre Watan

اردو یونیورسٹی کے نظامت فاصلاتی تعلیم کے امتحانات کے نتائج جاری

Paigam Madre Watan

شکواہ فلسطین

Paigam Madre Watan

Leave a Comment

türkiye nin en iyi reklam ajansları türkiye nin en iyi ajansları istanbul un en iyi reklam ajansları türkiye nin en ünlü reklam ajansları türkiyenin en büyük reklam ajansları istanbul daki reklam ajansları türkiye nin en büyük reklam ajansları türkiye reklam ajansları en büyük ajanslar