Delhi دہلی

پچھلے کچھ دنوں سے خبریں چل رہی ہیں کہ مودی جی کیجریوال کو جیل میں رکھنے کے لیے عدلیہ پر دباؤ ڈال رہے ہیں: رینا گپتا

نئی دہلی، عام آدمی پارٹی کی سینئر لیڈر رینا گپتا نے کہا کہ پچھلے کچھ دنوں سے یہ خبریں آ رہی ہیں کہ مودی جی اب کیجریوال کو جیل میں رکھنے کے لیے عدلیہ پر دباؤ ڈالنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ میڈیا کے مطابق ہائی کورٹ کی بنچ جس نے کیجریوال کو ٹرائل کورٹ سے دی گئی ضمانت پر روک لگا دی تھی۔اس بنچ کے جج کے بھائی ای ڈی کے خصوصی وکیل ہیں۔ اگر اس میں کوئی صداقت ہے تو یہ انتہائی افسوسناک ہے۔ انہوں نے کہا کہ پی ایم ایل اے کیس میں ضمانت ملنے کا مطلب ہے کہ وہ شخص بے قصور ہے اور ٹرائل کورٹ نے کیجریوال کو ضمانت دی تھی۔ جب مودی جی کو معلوم ہوا کہ کیجریوال کی باقاعدہ ضمانت منظور ہو گئی ہے۔جب یہ ہونے والا تھا تو 14 ماہ سے سوئی ہوئی سی بی آئی کو فعال کر دیا گیا۔ لیکن اب پورے ملک کو پتہ چل گیا ہے کہ کیجریوال کے خلاف کوئی ثبوت نہیں ہے۔ بی جے پی انہیں کسی بھی طرح جیل میں رکھنا چاہتی ہے۔عام آدمی پارٹی کی سینئر لیڈر رینا گپتا نے اتوار کو پارٹی ہیڈکوارٹر میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ پورا ملک پچھلے دو سالوں سے نام نہاد شراب گھوٹالہ کی کہانیاں سن رہا ہے۔ دو سال سے تفتیش جاری ہے، اس دوران لاکھوں صفحات پر مشتمل دستاویزات عدالت میں جمع کرائی گئیں، 50 ہزار صفحات کی دستاویزات جمع کی گئیں، 554 گواہوں پر جرح کی گئی۔گواہی لی گئی، لیکن اس سب کے باوجود تحقیقاتی ایجنسیوں کے پاس اروند کیجریوال کے خلاف کوئی ثبوت نہیں ہے۔ کچھ لوگوں کو ضمانت کا لالچ دیا گیا اور جھوٹے بیانات ریکارڈ کرائے گئے۔ اسی دوران کچھ گواہوں کو اس قدر مارا پیٹا گیا کہ ان کے کانوں سے خون نکلنے لگا اور تب ہی ان کی گواہی قلمبند کی گئی۔ ایک گواہ کو دھمکی دی گئی کہ اگر آپ جھوٹی گواہی نہیں دیتے تو ہم دیکھیں گے کہ آپ کی بیٹی کیسے اسکول جائے گی۔ گواہ کی بیوی نے خودکشی کی کوشش کی۔ ان تمام گواہوں پر یا تو دباؤ ڈالا گیا یا انہیں ضمانت کا لالچ دے کر ان سے جھوٹے بیانات لیے گئے۔ ساتھ ہی عدالت نے اروند کیجریوال کو بے قصور ثابت کرنے والی دستاویزات کو ‘ناقابل اعتماد دستاویزات’ قرار دیا ہے۔ان کے سامنے بھی نہیں رکھا گیا۔رینا گپتا نے کہا کہ یہ دلچسپ کہانیاں گزشتہ 2 سال سے جاری ہیں۔ وہ اروند کیجریوال کو کسی بھی طرح جیل سے باہر آنے سے روکنے کی پوری کوشش کر رہے ہیں۔ کیونکہ پورے ملک میں اگر بی جے پی کسی سے ڈرتی ہے تو وہ صرف اروند کیجریوال ہیں۔ بی جے پی جانتی ہے کہ وہ عام آدمی پارٹی اور اروند کیجریوال کو ہرا نہیں سکتی۔ اس لیے وہ کوئی نہ کوئی سازش رچا کر ان کو سلاخوں کے پیچھے رکھنا چاہتے ہیں۔ اروند کیجریوال کو ضمانت دیتے ہوئے ای ڈی ٹرائل کورٹ نے واضح طور پر کہا تھا کہ کیجریوال کے خلاف کوئی منی ٹریل نہیں ہے۔ ای ڈی اس کے خلاف بدنیتی سے کام کر رہی ہے۔ PMLA کیس میں ضمانت حاصل کرنے کا مطلب ہے کہ وہ شخص بے قصور ہے۔ کیونکہ پی ایم ایل اے کے تحت ایک جج ضمانت صرف اس وقت دیتا ہے جب اسے یقین ہو کہ وہ شخص مکمل طور پر بے قصور ہے۔ ٹرائل کورٹ نے اروند کیجریوال کو ضمانت دے دی۔ لیکن آرڈر کو اپ لوڈ کرنے سے پہلے ہی ای ڈی اس پر روک لگانے کے لیے ہائی کورٹ پہنچ گئی۔ اس سے صاف ہے کہ بی جے پی کی بڑی تحقیقات جیسے ED-CBI آج ایجنسیاں بدنیتی کے ساتھ کام کر رہی ہیں۔ رینا گپتا نے کہا کہ سی بی آئی نے اروند کیجریوال کو 14 مہینے پہلے یعنی 16 اپریل 2023 کو پوچھ گچھ کے لیے بلایا تھا۔کیجریوال پوچھ گچھ کے لیے گئے، ان سے جو بھی سوال پوچھے گئے ان کا جواب دیا۔ اس کے بعد ملک کی اہم جانچ ایجنسی سی بی آئی 14 ماہ تک سوتی رہی۔ اس دوران اس نے کوئی پوچھ گچھ نہیں کی۔ لیکن جب وزیر اعظم مودی سمجھ گئے کہ اروند کیجریوال کی ضمانت منظور ہونے والی ہے اور پھر سی بی آئی کو فعال کر دیا گیا۔ سی بی آئی کو کہا گیا کہ وہ کوئی بھی مقدمہ درج کرے اور جلد از جلد کیجریوال کو گرفتار کرے۔ جس سی بی آئی نے 14 ماہ قبل اروند کیجریوال کو گواہ کے طور پر بلایا تھا، اب انہیں ملزم بنا دیا ہے۔ اب آہستہ آہستہ پورے ملک کو پتہ چل گیا ہے کہ یہ سارا شراب گھوٹالہ جعلی ہے۔ ان کے پاس نہ تو کیجریوال کے خلاف کوئی منی ٹریل ہے اور نہ ہی کوئی ثبوت، لیکن پھر بھی انہیں جیل میں رکھا جا رہا ہے۔رینا گپتا نے کہا کہ سی بی آئی نے قانونی طریقہ کار کی خلاف ورزی کرتے ہوئے اروند کیجریوال کو گرفتار کیا ہے۔ پچھلے کچھ دنوں سے ایسی خبریں آ رہی ہیں کہ وزیر اعظم مودی ملک کی عدلیہ پر دباؤ ڈال رہے ہیں۔ اب تک لوگوں کو یقین تھا کہ چاہے انہیں پولیس یا ای ڈی، سی بی آئی سے انصاف نہ ملے، لیکن ملک کی عدلیہ ان کے ساتھ ضرور انصاف کرے گی۔ اب پچھلے کچھ دنوں سے یہ اطلاع مل رہی ہے کہ ہائی کورٹ بنچ کے جس جج نے ٹرائل کورٹ کے ضمانت کے حکم پر روک لگا دی تھی ان میں سے ایک جج کا بھائی ای ڈی کا خصوصی وکیل ہے۔ اگر اس میں ذرہ برابر بھی حقیقت ہے تو یہ بڑی بدقسمتی ہے۔ ہر شخص یہ مانتا ہے۔عدلیہ اس کے ساتھ انصاف کرے گی۔ لیکن ایسا لگتا ہے کہ اروند کیجریوال کو جیل میں رکھنے کے لیے کسی نہ کسی طریقے سے عدلیہ پر دباؤ ڈالنے کی کوشش کی جارہی ہے۔ رینا گپتا نے کہا کہ دہلی کے مقبول وزیر اعلی اروند کیجریوال کو دہلی کے لوگوں نے تین بار منتخب کیا ہے۔ مودی جی نے انہیں جھوٹے مقدمے میں جیل میں ڈال دیا۔ اگر کیجریوال باہر ہوتے تو وہ دہلی کے لیے اور بھی بہت سے نئے منصوبے بنا رہے ہوتے۔ لیکن انہوں نے سازش کر کے ان کو قید کر دیا۔ دہلی حکومت کام روکنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ آپ دوسرے وزراء پر دباؤ ڈال رہے ہیں۔ مودی جی چاہے کتنی ہی کوشش کر لیں، اروند کیجریوال اور عام آدمی پارٹی کا ایک بھی کارکن جھکنے والا نہیں ہے۔ ہم اسی طرح جرائم اور کرپشن کے خلاف آواز اٹھاتے رہیں گے۔ ایک دن اروند کیجریوال اور عام آدمی پارٹی کے ہاتھوں بی جے پی کا سیاسی کیرئیر ختم ہو جائے گا۔ آپ جتنی بھی سازشیں کر لیں، ہمیں خدا کے انصاف پر پورا بھروسہ ہے۔ اروند کیجریوال یقینی طور پر باہر آئیں گے اور دہلی کے لوگوں کے لیے کام کرتے رہیں گے۔

Related posts

مولانا آزاد ایجوکیشن فائونڈیشن کا بند کیا جانا اقلیتی مسلمانوں کے حق سے انکار کا حصہ ہے۔ ایس ڈی پی آئی

Paigam Madre Watan

یہ علم کا سودا یہ رسالے یہ کتابیں،اک شخص کی یادوں کو بھلانے کے لیے ہیں

Paigam Madre Watan

سپریم کورٹ نے گجرات حکومت کو دستاویزات تیار کرنے کے لیئے آخری موقع دیا، حتمی سماعت 24/ جولائی کو کیئے جانے کا حکم جاری کیا

Paigam Madre Watan

Leave a Comment

türkiye nin en iyi reklam ajansları türkiye nin en iyi ajansları istanbul un en iyi reklam ajansları türkiye nin en ünlü reklam ajansları türkiyenin en büyük reklam ajansları istanbul daki reklam ajansları türkiye nin en büyük reklam ajansları türkiye reklam ajansları en büyük ajanslar